روئی کے بھائو میں مندی، فی من 300 روپے مزید کمی

11 فروری 2018

کراچی(کامرس رپورٹر) مقامی کاٹن مارکیٹ میں گزشتہ ہفتہ کے دوران بھی مندی کا تسلسل جاری رہا۔ کاٹن یارن مارکیٹ میں غیر معمولی مندی اور بین الاقوامی کاٹن کے بھائو میں نمایاں کمی کے باعث ٹیکسٹائل و اسپننگ ملز روئی کی خریداری میں دلچسپی نہیں لے رہے ہیں۔ملوں کی درآمد شدہ روئی بھی آرہی ہے۔ جس کے باعث جنرز پریشان ہیں گزشتہ تین ہفتوں کی مندی کے تسلسل کی وجہ سے روئی کا بھائو ایک ہزار روپے کم ہوکر معیاری کوالٹی کی روئی فی من 7000 روپے کی نچلی سطح پر آگئی ہے جبکہ کاروباری حجم بھی نہایت کم ہوگیا ہے۔کراچی کاٹن ایسوسی ایشن کی اسپاٹ ریٹ کمیٹی نے بھی اسپاٹ ریٹ میں مزید 300 روپے کی کمی کرکے اسپاٹ ریٹ فی من 7000روپے کے بھائو پر بند کیا۔صوبہ سندھ و پنجاب میں روئی کا بھائو فی من 6200 روپے سے 7000 روپے رہا جبکہ پھٹی جو نہایت کم رہ گئی ہے اس کا بھائو بھی کم ہوکر فی 40 کلو 2500 تا 3200 روپے ہوگیا۔ کراچی کاٹن بروکرز فورم کے چئیرمین نسیم عثمان نے بتایا کہ بین الاقوامی کپاس منڈیوں میں روئی کے بھائو میں نمایاں کمی واقع ہوئی ہے۔ ٹیکسٹائل مصنوعات کے ذرائع نے بتایا کہ پاکستان کی مارکیٹوں میں بھارت اور چین کا کپڑا دبئی کے راستے غلط ڈیکلریشن سے پاکستان میں آرہا ہے جس کی وجہ سے پاکستان کی کپڑے کی صنعت متاثر ہورہی ہے ۔