تفتیش کے دوران کسی گواہ نے نہیں بتایا کہ حسن، حسین اور مریم نواز، نوازشریف کے زیرکفالت رہے: واجد ضیا

Apr 11, 2018 | 19:17

ویب ڈیسک

احتساب عدالت اسلام آباد میں شریف خاندان کیخلاف ایون فیلڈ ریفرنس کی سماعت ہوئی۔سابق وزیراعظم نوازشریف ،مریم نوازاورکیپٹن ریٹائرڈ محمدصفدر عدالت میں پیش ہوئے۔ دوران سماعت واجد ضیا کا کہنا تھا کہ کسی گواہ نے نہیں بتایاکہ حسن اور حسین نوازکسی کاروبارکیلیے نوازشریف کے زیرکفالت تھے۔ جے آئی ٹی نے سورس دستاویزات کی جافزا سے تصدیق نہیں کرائی اورنہ ہی کیپٹل ایف زیڈ ای کے مالک، ڈائریکٹرزاوردستخط کے مجازافسرکا ریکارڈ مانگا۔ نیب پراسیکیوٹرکا کہنا تھا کہ تین دن سے جس نکتے پربحث ہورہی ہے وہ غیرمتعلقہ ہے۔ خواجہ حارث کا کہنا تھا کہ اگر یہ اتنا ہی غیرمتعلقہ ہے تو ریکارڈ کیوں لیکر آئے۔ دفاع میں ہرکچھ پوچھنے کا حق محفوظ رکھتاہوں۔ خواجہ حارث نے واجد ضیا سے پوچھا کہ کیپٹل ایف زیڈ ای سے متعلق تفتیش کرنیوالی ٹیم پاکستان کب واپس پہنچی۔ جس پر واجد ضیا نے بتایا کہ ٹیم پانچ جولائی دو ہزارسترہ کو واپس آئی۔ نوازشریف کو ان دستاویزات سے کنفرنٹ کرانے کیلیے کوئی نوٹس جاری نہیں کیاگیا۔ جے آئی ٹی نے اس بات پر بھی کوئی تحقیقات نہیں کیں کہ نوازشریف کو تنخواہ کی ادائیگی کا ذریعہ کیا تھا۔ کیس کی مزید سماعت کل صبح تک ملتوی کردی گئی۔ خواجہ حارث واجد ضیا دسویں روز بھی جرح جاری رکھیں گے۔

مزیدخبریں