نئے بجلی پاور پلانٹس آپریشنل نہ ہونے سے جنوبی پنجاب کو فراہمی متاثر ہونے کا خدشہ

11 اپریل 2018

ملتان (نامہ نگار خصوصی) مسلم لیگ (ن) کی حکومت کے بجلی پیدا کرنے کے 3 بڑے منصوبے ابتدا میں ہی ناکامی سے دو چار ہو گئے ۔ ان منصوبوں سے 3600 میگا واٹ بجلی مارچ 2018ء میں نیشنل گرڈ سسٹم کا حصہ بننا تھا لیکن تاحال ان کی ٹیسٹ رینکنگ بھی شروع نہیں ہوسکی ہے ۔ ری گیسفائیڈ نیچرل گیس (آر ایل این جی) پر چلنے والی بہادر شاہ ، بلوکی اور بھکی پاور پلانٹس سے مجموعی طور پر 3600 میگا واٹ بجلی کی پیداوار تاحال شروع نہیں ہوسکی ہے ۔ ان پاور پلانٹس سے 1200، 1200 میگا واٹ بجلی کی پیداوار شروع ہونا ہے ۔ ذرائع کے مطابق ان پاور پلانٹس کا کمرشل آپریشن شروع نہ ہونے سے جنوبی پنجاب سمیت صوبہ بھر میں بجلی کی فراہمی متاثر ہونے کا خدشہ ہے ۔