واٹر کمیشن کا نالوں کے اطراف تاریں ہٹانے کا حکم

11 اپریل 2018

کراچی(وقائع نگار) واٹر کمیشن کے سربراہ جسٹس ر امیر ہانی مسلم نے نالوں کی صفائی کا جامع پلان اور نہر خیام پر تعمیرات کے ڈیزائن کی تبدیلی کی تفصیلات طلب کرتے ہوئے اینٹی کرپشن حکام کو کمیشن سے متعلق افسران کے خلاف انکوائری جاری رکھنے کا حکم دیدیا۔ تفصیلات کے مطابق سندھ ہائیکورٹ میں جسٹس ر امیر ہانی مسلم کی سربراہی میں واٹر کمیشن کی کارروائی ہوئی۔ چیف سیکریٹری، میئر کراچی سمیت دیگر حکام کمیشن کی کارروائی میں پیش ہوئے۔ چیف سیکریٹری سندھ نے بتایا کہ پولیس کی مدد سے 2016-17 میں گجر نالے سے تجاوزات ختم کی تھی۔ نالوں کی صفائی کی بنیادی ذمہ داری کے ایم سی کی ہے۔ نالوں کی صفائی کیلئے 5 سو ملین روپے کی سمری جلد منظور ہوجائے گی۔ میئر کراچی وسیم اختر نے کہا کہ محمود آباد اور گجر نالہ سندھ حکومت نے کے ڈی اے کے سپرد کیا ہے۔ کمیشن نے استفسار کیا گجر نالہ 200 فٹ سے کم ہوکر چالیس فٹ کیسے ہوگیا؟ چیف سیکریٹری نے جواب دیا کہ نالے کی چوڑائی کم نہیں کریں گے ، نالہ اوریجنل شکل میں بحال کیا جائے گا۔ چیف سیکریٹری نے کمیشن کو یقین دہانی کرائی کہ نالوں کی صفائی کا کام جلد مکمل کرلیں گے۔ کمیشن نے نالوں کی صفائی کا جامع پلان اور نہر خیام پر تعمیرات کے ڈیزائن کی تبدیلی کی تفصیلات طلب کرلیں۔ کمیشن نے استفسار کیا کہ کورنگی پمپنگ اسٹیشن پر تجاوزات کیسے قائم ہوگئیں؟ چیف سیکریٹری نے کہا کہ مجھے بتایا جائے تو آدھے گھنٹے میں تجاوزات ختم کردوں گا۔ کمیشن نے کے الیکٹرک، سوئی گیس اور پی ٹی سی ایل کو نالوں کے اطراف سے تاریں ہٹانے کا حکم دیدیا۔
واٹر کمیشن