ہماری حکومت امیر،غریب، طاقتور اورکمزور کو ایک صف میں کھڑا کرے گی، احتساب نیچے سے نہیں بلکہ اوپر سے شروع ہوگا: گورنر پنجاب

Sep 10, 2018 | 20:35

  گورنر پنجاب چوہدری محمد سرورنے کہا ہے کہ وزیر اعظم عمران خان کی ہدایت پر گورنر ہائوس لاہور کو عوام کے لئے کھول دیا ہے۔پہلے مرحلے میں فیملیز کے لئے گورنر ہائوس کو کھولا گیا ہے اور وہ ہر اتوار کو صبح 10بجے سے شام 6بجے تک گورنر ہائوس سیر کے لئے آسکیں گے۔ انہوں نے کہا کہ اس تاثر کو بدلناہے کہ یہ ملک اشرافیہ کے لئے ہے ۔ ہماری حکومت امیر،غریب، طاقتور اورکمزور کو ایک صف میں کھڑا کرے گی۔ اب احتساب نیچے سے نہیں بلکہ اوپر سے شروع ہوگا۔ قبضہ مافیا کے خلاف بلاامتیاز کاروائی کی جائے گی۔ اب کوئی طاقتور غریب کی عزت پر حملہ نہیں کر سکے گا اور نہ ہی گھر وزمین پر قبضہ کر سکے گا۔ وزیر اعظم پاکستان عمران خاں اور چیف جسٹس پاکستان ثاقب نثار کو ڈیمز کی تعمیر کے لئے مخلصانہ کاوشوں پر مبارکباد پیش کرتا ہوں۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے یہاں گورنر ہائوس لاہور میں ایک پُر ہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ بچے ہمارے ملک کا مستقبل ہیں مگر وہ سکیورٹی کے نام پر گورنر ہائوس میں داخل نہیں ہوسکتے تھے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بھر کے تمام سکولوں کے طلبا و طالبات گورنر ہائوس کی سیر کے لئے آنا چاہیں اُن کو گورنر ہائوس کی سیر کرائی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ گورنر ہائوس میں طلباء کا سکول ہے جس میں 930بچے زیر تعلیم ہیں جبکہ گرلزسکول میں 670طالبات تعلیم حاصل کررہی ہیں ، اِسی طرح لڑکیوں کا ووکیشنل انسٹی ٹیوٹ ہے جس میں 218بچیوں کو مختلف ہنر سکھائے جاتے ہیں۔ گورنر نے کہا کہ گورنر ہائوس کی ڈسپنسری کو وسیع کیا جائے گا تاکہ ملحقہ علاقوں کے مکین کوبھی یہاطبی سہولیات فراہم کی جاسکیں ۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ وقت گزر گیا کہ جب احتساب پٹواری اور سپاہی سے شروع ہوتا تھا ، اب وزیر اعظم، وزراء اعلیٰ، گورنرزاور وزراء احتساب کے لئے اپنے آپ کو پیش کریں گے۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان تحریک انصاف کی حکومت انصاف کی بالادستی اور قانون کی حکمرانی کے لئے کام کرے گی اور کسی سیاسی مخالف کے خلاف انتقامی کاروائی نہیں کی جائے گی۔ انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت عوام کو بنیادی سہولیات فراہم کرے گی۔ ایک سوال کے جواب میں گورنر پنجاب نے کہا کہ وہ گورنر ہائوس میں رہائش نہیں رکھیں گے بلکہ اپنی ذاتی گھر میں رہیں گے۔ گورنرنے کہا کہ شہریوں کو صاف پانی کی فراہمی کے لئے لانگ ٹرم پالیسیاں مرتب کی جارہی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ ماضی میں حکمرانوں نے پانی کے لئے کوئی جامع اقدامات نہیں کئے بلکہ زبانی دعوے کیے ۔ انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم پاکستان اور چیف جسٹس پاکستان نے ڈیمز کی تعمیر کے لئے فنڈقائم کیا ہے جس میں اوورسیز پاکستانی بڑھ چڑھ کر حصہ لے رہے ہیں۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ پہلے اختیارات کا منبع ایک تھا ،ہماری حکومت اختیارات نچلی سطح پر منتقل کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یونین کونسل اور ویلج کونسل کو مالیاتی اور انتظامی اختیارات دیئے جارہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ہماری حکومت جو اقدامات کرے گی وہ مستقل ہوں گے اور کوئی بھی ان کو تبدیل نہیں کرسکے گی۔  

مزیدخبریں