علامہ نثاراحمد نوری کو انسدادِ دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے باعزت بری کردیا

Sep 10, 2018

راولپنڈی (نیوزرپورٹر) پاکستان سنی تحریک علماء بورڈکے رہنما علامہ نثاراحمد نوری کو انسدادِ دہشت گردی کی خصوصی عدالت نے باعزت بری کردیا۔ 2016ء میں تھانہ حضرومیں علامہ نثاراحمد نوری کے خلاف مذہبی منافرت پھیلانے کا بے بنیاد مقدمہ درج کیاگیا تھاتاہم ڈسٹرکٹ اینڈسیشن جج سلیمان بیگ نے عدم ثبوت کی بنیادپرعلامہ نثاراحمد نوری کو باعزت بری کردیا،پاکستان سنی تحریک راولپنڈی کے رہنمائوںعلامہ طاہراقبال چشتی، علامہ پیرعمران نظامی، علامہ شوکت حسین نقشبندی،علامہ فضل الرحمن، علامہ یونس حقانی ودیگرنے علامہ نثاراحمدنوری کی باعزت بریت کو حق اور سچ کی فتح قراردیتے ہوئے اپنے مشترکہ بیان میں کہاکہ جھوٹے اور بے بنیادمقدمات ہمیں علم حق بلندکرنے سے نہیں روک نہیں سکتے،ہم آئین وقانون کی بالادستی پر یقین رکھتے ہیں،علامہ نثاراحمد نوری جیسے علماء صوفیاء کرام کے نظریات کے ترجمان اورانکی تعلیمات کے آمین ہیںجنھوں نے ہمیشہ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے مثبت کردار ادا کیا اورقانون نافذ کرنے والے اداروں کاساتھ دینے کیلئے رائے عامہ ہموارکی۔انہوں نے کہا صرف پاکستان ہی نہیں بلکہ بین الاقوامی سطح پربھی ان کی گرانقدرخدمات کوقدرکی نگاہ سے دیکھا جاتاہے، پاکستان ہمارے ابائواجدادنے اپنی جانوں کے نذرانے دیکر بنایاتھاانشاء اللہ ہم بھیپاکستان کی سلامتی، واستحکام اور اسلام کی سربلندی کیلئے اپنی آئینی وقانونی جدوجہد جاری رکھیں گے،سنی تحریک کے رہنمائوں نے وکیل دفاع چوہدری ظہراخترایدوکیٹ کو بھی خراج تحسین پیش کیاجن کے بھرپوردلائل کی بدولت علامہ نثاراحمد نوری باعزت بری ہوئے۔

مزیدخبریں