مسلم لیگ (ن) گیس پائپ لائن و دیگر منصوبوں کو پی پی کے کہہ کر التوا میں نہ ڈالے: منظور وٹو

10 جون 2013

لاہور (این این آئی) پیپلز پارٹی پنجاب کے صدر میاں منظور احمد وٹو نے کہا ہے کہ بجلی کی پیداوار میں اضافے کیلئے مختلف منصوبوں کا آغاز کرنے کے باوجود عوام کے ردعمل کا سامنا اور انتخابات میں اسکے نتائج بھگت چکے ہیں۔ مسلم لیگ (ن) کو وفاق میں واضح اور پنجاب میں دو تہائی سے بھی زیادہ اکثریت ملی ہے اب انہیں مسائل کے حل میں کوئی بہانہ نہیں بنانا چاہئے اور بجلی کے بحران سمیت تمام مسائل حل کئے جائیں‘ حکومت کو پاک ایران گیس پائپ لائن سمیت دیگر منصوبوں کو پیپلز پارٹی کے منصوبے قرار دیکر التواءمیں نہیں ڈالنا چاہئے‘ پنجاب اسمبلی میں اپوزیشن کی تعداد چالیس کے قریب ہے اور تمام جماعتوںکو متحد ہو کر مضبوط اپوزیشن کا کردار ادا کرنا چاہئے۔ وہ گزشتہ روز اپنی رہائش گاہ پر مختلف شخصیات کے اعزاز میں دئیے جانےوالے ظہرانے کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے۔ منظور وٹو نے کہا کہ قوم نے مسلم لیگ (ن) کو مینڈیٹ دیکر ان سے توقعات وابستہ کی ہیں اور انہیں ان پر پورا اترنا ہوگا اور ہم امید کرتے ہیں کہ وہ اس پر پورا اتریں گے ۔حکومت کرنا اور پالیسیاں بنانا مسلم لیگ (ن) کا استحقاق ہے جبکہ انکی اچھی بات کو اچھا کہنا اور اور انکی کمزوریوں کی نشاندہی کرنا اپوزیشن کی ذمہ داری ہے ۔ جتنا اہم کردار حکومت کا ہے اتنا ہی اہم کردار اپوزیشن کا بھی ہے۔ انہوں نے مسلم لیگ (ن) کے بلوچستان اور خیبر پی کے میں کردار کو قابل تعریف قرار دیتے ہوئے کہا کہ انہوں نے مینڈیٹ خراب نہ کرکے اچھا کام کیا ہے۔ انہوں نے سندھ میں گورنر راج لگائے جانے کے حوالے سے سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نے اسکی تردید کر دی ہے اور میر ے خیال میں اب کوئی بھی اس طرح کی غیر اخلاقی اور غیر سیاسی حرکت نہیں کر سکتا۔