عمران خان سے سراج الحق، پرویز خٹک کے مذاکرات، محکمہ تعلیم پر ڈیڈ لاک برقرار

10 جون 2013

لاہور (خصوصی نامہ نگار+نیوز رپورٹر+نوائے وقت رپورٹ+ایجنسیاں) صوبہ خیبر پی کے میں تعلیم کی وزارت کے معاملے پر جماعت اسلامی اور تحریک انصاف میں ڈیڈ لاکھ برقرار رہا۔ اختلافات کو سلجھانے کے لئے عمران خان کے گزشتہ روز لاہور میں وزیرالیٰ پرویز خٹک اور سینئر وزیر سراج الحق سے مذاکرات میں بریک تھرو نہ ہو سکا۔ جماعت اسلامی کے ذرائع نے اس حوالے سے بتایا کہ وزیراعلیٰ خیبر پی کے نے محکمہ تعلیم جماعت اسلامی کے سپرد کرنے کی خواہش ظاہر کی تھی لیکن اب وہ اس سے منحرف ہو کر اپنے پاس یہ محکمہ رکھنا چاہتے ہیں جس کی وجہ سے معاملہ سلجھ نہیں رہا۔ تفصیلات کے مطابق زمان پارک میں تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے جماعت اسلامی کے رہنما سراج الحق اور وزیراعلیٰ خیبر پی کے پرویز خٹک سے طویل مذاکرات میں صوبے میں امن وامان اور وزارتوں کی تقسیم کے حوالے سے ڈیڈ لاک برقرار رہا تاہم ملاقات کے بعد صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے پرویز خٹک نے کہا کہ وزارتوں کے حوالے سے اتحادیوں سے انکے کوئی اختلافات نہیں تین چار روز میں صوبائی کابینہ کا اعلان کردیا جائے گا عوام کی ترقی کیلئے جماعت اسلامی، قومی وطن پارٹی، تحریک انصاف سمیت سب متفق ہیں۔ ایک سوال پر پرویز خٹک نے کہا کہ امریکی عہدیداروں کو بلا کر احتجاج کرنے سے کچھ بنے گا نہ ہمیں تسلی ہوگی وفاق تمام فریقین کو اعتماد میں لیکر پالیسی بنائے۔ اس موقع پر جماعت اسلامی کے رہنما سینئر وزیر سراج الحق نے کہا کہ مسئلہ وزارتوں کا نہیں ایشوز کا ہے۔ خیبر پی کے شدید مشکلات میں گھرا ہوا ہے ہم تعلیم کو آسان بنائینگے، انہوں نے کہا کہ ہمارے درمیان اختلافات پیدا کرنے والوں کو مایوسی ہوگی انہوں نے کہا کہ صوبائی کابینہ میں مغل شہزادوں کی طرح کوئی وزیر نہیں ہوگا۔ دریں اثناءسراج الحق نے منصورہ جا کر امیر جماعت اسلامی سید منور حسن کو عمران خان سے ہونیوالے مذاکرات کی رپورٹ پیش کی۔ انہوں نے بتایا کہ عمران خان سے ہونیوالی ملاقات میں خیبر پی کے معاملات کے حوالے سے جو تجاویز پیش کی گئیں ان پر غور کے لئے صوبائی ذمہ داران جماعت اسلامی کا اجلاس جلد ہوگا جس میں محکموں سے متعلق حتمی فیصلہ کیا جائے گا۔