آئی ایم ایف کی پاکستان کو قرض کیلئے کڑی شرائط عائد، مہنگائی کا طوفان لائیگا: ماہرین

10 جون 2013

اسلام آباد (اے پی اے) عالمی مالیاتی اداروں نے پاکستان کے نئے پروگرام کے لئے کڑی شرائط عائد کردیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ عالمی مالیاتی اداروں سے نئے قرضوں سے ملک میں مہنگائی کا طوفان لائے گا۔ عالمی مالیاتی ادارے پاکستان کو مالیاتی بحران سے نمٹنے اور قرضوں کی ادائیگیوں کے لئے کڑی شرائط عائد کررہے ہیں۔ ماہرین کا کہنا ہے کہ آئی ایم ایف کے پانچ سے سات ارب ڈالر کے بیل آو¿ٹ پیکج کی قیمت مہنگائی کے طوفان کی صورت میں ادا کرنا ہو گی۔ ادھر ذرائع کا کہنا ہے کہ پاکستان اکنامک منیجرز نے آئی ایم ایف اور عالمی مالیاتی فنڈ کے حکام سے بات چیت کی ہے جبکہ مالیاتی اداروں کی جانب سے پاکستان کے بجٹ خسارے میں کمی کے لئے عالمی مالیاتی اداروں کی جانب سے جو اقدامات تجویز کئے گئے ہیں ان کے مطابق عالمی مالیاتی اداروں کے حکام پاکستانی روپے کی قدر میں پانچ سے سات فیصد کمی کے خواہاں ہیں۔ ٹیکس ٹی جی ڈی پی میں اضافے کیلئے ٹیکسوں کی شرح بڑھانے، ٹیکسوں کے دائرہ کار میں توسیع، بجلی کی قیمت خرید اور قیمت فروخت کے فرق کو ختم کرنے کا بھی مطالبہ کر رہے ہیں۔ معاشی ماہرین کا کہنا ہے کہ پاکستانی روپے کی قدر میں مزید کمی کا مطلب اندورنی اور بیرونی قرضوں میں اضافہ اور پاکستانی درآمدات کی قیمت میں اضافے کی صورت میں نکلے گا۔ عام پاکستانی صارفین بجلی کی بھاری قیمت کی ادائیگی کی اہلیت کھو رہے ہیں۔ جس کا نتیجہ بجلی چوری کی شرح میں اضافہ کی صورت میں نکل رہا ہے۔ اور اب بجلی کی چوری کی شرح چالیس فیصد تک پہنچ چکی ہے، اگر ایسی صورت میں قیمت مزید بڑھائی گئی تو بجلی چوری کی شرح میں مزید اضافہ ہو گا۔