عافیہ صدیقی پر حملہ نوازشریف حکومت کے عزم پر سوالیہ نشان ہے: فوزیہ صدیقی

10 جون 2013
عافیہ صدیقی پر حملہ نوازشریف حکومت کے عزم پر سوالیہ نشان ہے: فوزیہ صدیقی

کراچی (ثناءنیوز) ڈاکٹر فوزیہ صدیقی نے کہا ہے کہ امریکی جیل میں پاکستانی شہری ڈاکٹر عافیہ صدیقی پر حملہ پاکستان اور پاکستانی شہریوں کی آزادی، عزت و وقار اور خود مختاری کی حفاظت نواز شریف حکومت کے عزم پر ایک بڑا سوالیہ نشان ہے۔ اپنے بیان میں انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) اسمبلی میں بھاری اکثریت رکھنے کے باوجود کیا وجہ ہے کہ بے گناہ عافیہ کی رہائی کے مسئلے پر کارروائی سے گریزاں ہے۔ انہوں نے مزیدکہا کہ قوم کو میاں نواز شریف سے بہت زیادہ امیدیں اور توقعات وابستہ ہیں کہ ان کی حکومت عافیہ کی رہائی کے معاملے میں پچھلی حکومت کی طرح بے حسی کا اعادہ نہیں کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ نواز شریف کی جانب سے عافیہ کی رہائی کیلئے ماضی میں کئے گئے مطالبات اور عزم کے مطابق اب نومنتخب حکومت کو 100 دن کے اندر عافیہ کو وطن واپس لاکر قوم کا سر فخر اور وقار سے بلند کرنا چاہئے۔ انہوں نے کہاکہ میاں نوازشریف کی حکومت کیلئے ڈاکٹر عافیہ کا کیس ایک ٹیسٹ کیس ہوگا۔ ان کو ٹھوس اقدامات کے ذریعے قوم پر ظاہر کرنا ہوگا کہ قوم نے عافیہ کی رہائی سمیت ملکی مسائل کے حل کے لئے ان پر جو اعتماد کیا ہے وہ درست ہے۔ ماضی کے حکمرانوں نے عافیہ کو باعزت وطن واپس لانے کے معاملے میں قوم کو دھوکہ دیا تو قوم نے عام انتخابات کے نتائج کی صورت میں ان کو بہترین جواب دے دیا۔ ڈاکٹر فوزیہ نے کہا کہ پوری قوم ڈاکٹر عافیہ کا انتظار کررہی ہے، معصوم عافیہ کو وطن واپس لا کر میاں نواز شریف پاکستانیوں کا دل جیتنے کا ایک اچھا موقع ضائع نہ کریں۔