مقبوضہ کشمیر دستی بم کا دھماکہ ایک شہری جاں بحق 18 زخمی

09 ستمبر 2017

سری نگر(کے پی آئی+نیٹ نیوز) سری نگر میں دستی بم کے ھماکے میں ایک شہری جاں بحق جبکہ خواتین اور ٹریفک پولیس اہلکاروں سمیت18افراد زخمی ہو گئے۔ تفصیلات کے مطابق سری نگر کے جہانگیر چوک میں گزشتہ روز نامعلوم افراد نے سی آر پی ایف کی گاڑی پر دستی بم کا حملہ کیادستی بم کا نشانہ چوک گیا اور وہ سڑک پر ہی پھٹ گیا،جس کی زد میں آکر کئی شہری زخمی ہوئے ۔دھماکے میں ایک شہری مقصود احمد شاہ زخموں کی تاب نہ لاکر دم توڑ بیٹھا جبکہ دھماکے میں 5خواتین سمیت18دیگر افراد زخمی ہوئے ۔ روہنگیائی مسلمانوں پر ظلم و جبر کے خلاف جمعہ کے روزوادی میں یوم احتجاج منایا گیا وادی جموں اور کرگل میں احتجاجی جلسے جلوس اور مظاہرئے ہوئے ۔ این آئی کارروائیوں کے خلاف بڈگام میں مکمل ہڑتال رہی جبکہ آزادی پسند قیادت سید علی شاہ گیلانی ، میرواعظ ڈاکٹرمولوی محمد عمر فاروق اور محمد یاسین ملک کی اپیل پر اتوار کو بھارتی وزیر داخلہ کی کشمیر آمد کے خلاف مکمل ہڑتال ہو گی ادھر جمعہ کو سید علی شاہ گیلانی ، میرواعظ ڈاکٹرمولوی محمد عمر فاروق گھر میں نظر بند رہے ۔ روہنگیائی مسلمانوں پر ظلم و جبر کے خلاف سرینگر،اننت ناگ،شوپیان اورکرگل میں احتجاجی مظاہرے ہوئے ۔ حکام نے مظاہروں کو روکنے کے لیے سرینگر کے حساس علاقوں میں جمعہ کی علی الصباح ہی سیکورٹی کی بھاری تعیناتی عمل میں لائی اور کرفیو جیسی صورتحال پیدا کر دی شہر کے مختلف علاقوں میں ناکے لگائے گئے تھے ۔شوپیاں میں احتجاج کے دوران طالب علموں اور پولیس کے درمیان پر تشدد جھڑپیں ہوئیں جس سے متعدد افراد زخمی ہو گئے ۔بھارتی فورسز نے ایک بار پھر ظلم و بربریت کا مظاہرہ کرتے ہوئے ضلع پلوامہ کے علاقوں کریم آباد اور راجپورہ میں محاصرے اور تلاشی کی کارروائی کے دوران نوجوانوں کو سخت زدو کوب کیا اور مکانوں ، دکانوں اور گاڑیوں کی توڑ پھوڑ کی۔ حریت قائدین سید علی گیلانی، میر واعظ ڈاکٹر مولوی محمد عمر فاروق اور محمد یاسین ملک نے اپنے مشترکہ بیان میں بھارت اور اس کے ریاستی اتحادیوں کی جانب سے کشمیری قیادت اور عوام کے خلاف جاری جارحیت کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ طاقت کے بل پر مزاحمتی قیادت کی سیاسی اور پر امن سرگرمیوں کو مسدود کر دیا گیا ہے اور حریت پسند قیادت اور عوام کو پشت بہ دیوار کرنے کے لئے ہر غیر جمہوری اور غیر اخلاقی ہتھکنڈے بروے کار لائے جا رہے ہیں۔قائدین نے بھارتی حکومت اور اس کے ریاستی اتحادیوں کے ظلم و جبر ، نا انصافیوں اور جبر و تشدد سے عبارت سرگرمیوں کے خلاف کل اتوار کو بھارتی وزیر داخلہ کی کشمیر آمد کے موقع پر ہمہ گیر احتجاجی ہڑتال کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ کشمیری عوام اس روز مکمل ہڑتال کر کے پوری دنیا پر واضح کریں گے کہ ان کی مبنی بر حق جدو جہدکو طاقت اور تشدد کے بل پر دبایا نہیں جا سکتا ۔بھارتی فورسز نے کل جماعتی حریت کانفرنس کی مجلس شوریٰ کا اجلاس منعقد کرنے پر پابندی لگا دی ہے۔ بھارتی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے)نے کشمیری حریت پسند رہنماوں کے خلاف کریک ڈاون تیز کرتے ہوئے گزشتہ24گھنٹوں کے دوران کشمیر،نئی دہلی اورگڑگائوں ہریانہ میں لگ بھگ40مقامات پرچھاپے مارے ، اس دوران کئی افراد کی گرفتاری کے علاوہ نقد کرنسی کے علاوہ لین دین اورمنقولہ وغیرمنقولہ جائیدادسے متعلق اہم ریکارڈودستاویزات اورکئی لیپ ٹاپ وغیرہ ضبط کئے ۔حزب المجاہدین سر براہ اور متحدہ جہاد کونسل کے سر براہ سید صلاح الدین نے روہنگیائی مسلمانوں کے قتل عام پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسلم حکمرانوں اور آئی سی کا طرز عمل اور مجرمان خاموشی امت کی رسوائی کا باعث ہے۔
کشمیر