اوپن یونیورسٹی کئی لحاظ سے دیگر جامعات سے مختلف ہے

09 ستمبر 2017

اسلام آباد (نامہ نگار) علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی کے وائس چانسلر ¾ پروفیسر ڈاکٹر شاہد صدیقی نے کہا ہے کہ ترقی یافتہ ممالک کی صفحوں میں شامل ہونے کے لئے پاکستان کے ہر شہری کو اپنے آپ پر حصول تعلیم فرض کرنا ہوگا ¾ ملک بھر کے دور دراز اور پسماندہ علاقوں میں سماجی و اقتصادی وجوہات کی بنا ابتدائی تعلیم سے محروم خواتین کو "اوپن سکولنگ سسٹم"کے تحت مڈل اور میٹرک سطح تک مفت تعلیم فراہم کرکے علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی بلاشبہ ملک سے ناخواندگی کے خاتمے میں سب سے نمایاں کردار ادا کررہی ہے۔ان خیالات کا اظہارانہوں نے فیکلٹی آف ایجوکیشن کے زیر اہتمام منعقدہ "عالمی یوم خواندگی"تقریب سے خطاب میں کیا۔تقریب حال ہی میں یونیورسٹی میںقائم کردہ "خواندگی مرکز برائے بالغاں" میں منعقدکیا گیا۔اس سینٹر کے پہلے بیچ کے تربیتی پروگرام کے شرکاءسے خطاب کرتے ہوئے ڈاکٹر شاہد صدیقی نے کہا کہ یہ آپ کی تعلیم و تربیت کا پہلا قدم ہے ¾ آپ نے اب رکنا نہیں ہے ۔ ڈاکٹر شاہد صدیقی نے کہا کہ یونیورسٹی ملک بھر کے جیلوں میں مقید افراد کو بھی جیل کے حدود کے اندر ہی مفت تعلیم فراہم کررہی ہے ¾ اس وقت تک 1000سے رائد قیدی تعلیمی نیٹ میں شامل ہوچکے ہیں۔ اوپن یونیورسٹی کئی لحاظ سے دیگر جامعات سے مختلف ہے۔ یہاں طلبہ کی تعداد 13۔لاکھ سے زائد ہے جس میں 57فیصد خواتین پر مشتمل ہے۔تقریب سے فیکلٹی آف ایجوکیشن کے ڈین ¾ ڈاکٹر ناصر محمود نے بھی خطاب کیا۔