پوری پارلیمنٹ پر تھوکتا ہوں، مشرف سے بات کرنے پر منموہن کو بھی میرے ساتھ جیل میں ہونا چاہئے: بھارتی صحافی

09 ستمبر 2014

اجمیر (کے پی آئی)  حال ہی میں پاکستان کا دورہ کرنے والے  بھارتی صحافی دید پرتاب  ویدک  پارلیمنٹ پر تھوکنے کا بیان دے کر پھر تنازعات میں گھر گئے ہیں ممبران پارلیمنٹ  اور پارلیمنٹ کو لے کر یہ قابل  اعتراض  بیان انہوں نے اجمیر لٹریری فیسٹیول میں دیا ہے، دراصل کچھ صحافیوں نے انہیں بتایا کہ  حافظ سعید  سے پاکستان میں ان کی ملاقات  کا بہانہ  بنا کر دو ممبران پارلیمنٹ ان کی گرفتاری  کا مطالبہ کر رہے ہیں اور ان کے خلاف ملک  سے غداری  کا مقدمہ چلانا چاہتے ہیں ،اس پر  انہوں نے کہا کہ  جسے میں نے سچ سمجھا ہے  اس کے لئے میں لڑا ہوں کبھی ڈرا نہیں ہوں کسی کے سامنے کوئی سمجھوتہ   نہیں کیا جب مجھے کسی نے کہا کہ  پارلیمنٹ میں دو ارکان  پارلیمنٹ نے میری  گرفتاری  کا مطالبہ کیا تو میں نے کہا کہ دو نہیں 100 بھی نہیں ، 543  ایم پی بھی اگر اتفاق رائے سے میری گرفتاری  کی تجویز منظور کریں  اور کہیں  کہ ڈاکٹر ویدک  کو پھانسی  پر چڑھائو  تو میں اس پوری پارلیمنٹ پر تھوکتا ہوں  میں ان سے کہوں گا  کہ  وہ بھاڑ  میں جائیں  وہ بیوقوف  اور ناسمجھ ہیں  میں ان کی بات کو  نہیں مانتا۔ ویدک  نے مزید کہا کہ اگر حکومت انہیں جیل  بھیجنا چاہتی ہے تو وہ تہاڑ  میں اپنے برابر  میں سابق وزیر اعظم  من موہن سنگھ  کو دیکھنا چاہیئں گے کیونکہ انہوں نے  پاکستان کے صدر جنرل مشرف سے بات چیت کی تھی جو کارگل  میں سینکڑوں  جوانوں کے قتل  کے مجرم مانے جاتے ہیں ۔ویدک  نے کہا کہ حافظ سعید سے سو گنا زیادہ خطرناک پرویز مشرف ہیں۔  بھارت کی طرف  سے کئی بار امن  مذاکرات کے بعد بھی مشرف  نے ملک کو نقصان ہی پہنچایا تھا  ۔میں کہنا چاہتا ہوں  کہ  میرے ساتھ سابق وزیر اعظم  من موہن سنگھ کو بھی جیل میں ڈال  دو انہوں نے بھی  تو پرویز مشرف  سے بات کی تھی۔ ویدک  نے کہا کہ میں حافظ سعید سے ملا، پربھاکرن  سے ملا اور  نہ جانے کیسے کیسے لوگوں سے ملا۔ میں ایسے تمام لوگوں سے ملنا چاہوں گا جو  بھارت مخالف ہیں ۔ ایسی سوچ کیسے پیدا ہو گئی یہ ان سے  بات چیت کر کے ہی تو جانا جا سکتا ہے واضح رہے کہ  گزشتہ 2 جولائی کو لاہور میں  ویدک  نے حافظ سعید  سے ملاقات کی تھی  جس کی وجہ سے  ان کی شدید تنقید ہوئی تھی۔