چیف جسٹس افتخار پرسوں ریٹائر ہوجائینگے دو سال میں 7 جج صاحبان کی ریٹائرمنٹ ہوگی

09 دسمبر 2013

اسلام آباد (نوائے وقت رپورٹ) چیف جسٹس افتخار محمد چودھری 11 دسمبر کو اپنے عہدے سے ریٹائر ہو جائیں گے، ان کی رخصتی کے ساتھ ہی گویا سپریم کورٹ میں ریٹائرمنٹ کی جھڑی لگ جائے گی، صرف دو سال کے عرصے میں سات جج صاحبان ریٹائر ہوجائیں گے۔ چیف جسٹس افتخار محمد چودھری کی ریٹائرمنٹ کے بعد صوبہ بلوچستان کی نمائندگی صفر ہو جائے گی۔ دو سال کے دوران تین جج صاحبان جسٹس تصدق حسین جیلانی، جسٹس ناصر الملک اور جسٹس جواد ایس خواجہ چیف جسٹس پاکستان کے عہدے پر فرائض انجام دینے کے بعد ریٹائر ہوجائیں گے۔ جسٹس خلجی عارف حسین 12 اپریل 2014ء کو، نئے چیف جسٹس جسٹس تصدق حسین جیلانی 5 جولائی 2014ء کو اور جسٹس محمد اطہر سعید 28 ستمبر 2014ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2015 میں جسٹس ناصر الملک 16 اگست 2015ئ، جسٹس جواد ایس خواجہ 9 ستمبر 2015ء کو، جسٹس سرمد جلال عثمانی 14 اکتوبر 2015ء کو اور جسٹس اعجاز احمد چودھری 14 دسمبر 2015ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2016ء میں جسٹس انور ظہیر جمالی 30 دسمبر 2016ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2017ء میں جسٹس امیر ہانی مسلم 31 مارچ 2017ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2018ء میں جسٹس اعجاز افضل خان 7 مئی 2018ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2019ء میں جسٹس میاں ثاقب نثار 17 جنوری 2019ء کو، جسٹس شیخ عظمت سعید 27 اگست 2019ء کو، جسٹس آصف سعید خان کھوسہ 20 دسمبر 2019ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ اس طرح 7 سال بعد 2020ء وہ سال ہوگا جس میں سپریم کورٹ کا کوئی جج ریٹائر نہیں ہوگا۔ 2021ء میں جسٹس اقبال  حمید الرحمان اور جسٹس مشیر عالم 17 اگست 2021ء کو ریٹائر ہوجائیں گے۔ 2022ء میں جسٹس گلزار احمد یکم فروری 2022ء کو ریٹائر ہوں گے۔