خواتےن کو قومی دھارے مےں شامل کئے بغےر اقتصادی ترقی ناممکن ہے:اےس اےم نصےر

08 نومبر 2014

لاہور (کامرس رپورٹر) فےڈرےشن آف پاکستان چےمبرز آف کامرس اےنڈ انڈسٹری (اےف پی سی سی آئی) کے رےجنل چےئرمےن اےس اےم نصےر نے اےف پی سی سی آئی کے رےجنل آفس مےں منعقد سارک چےمبرآف وومےن انٹر پر ےنےور کونسل (اےس سی ڈبلےو ای سی) اور آل پاکستان وومےن اےسوسی اےشن (اے پی ڈبےلو اے) کے درمےان مفاہمت کی ےادداشت پر دستخط کرنے کی تقرےب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ خواتےن کو قومی دھارے مےں شامل کئے بغےر اقتصادی ترقی ناممکن ہے، دنےا کے اکثر ممالک معاشی نمو کی شرح بڑھانے کی دوڑ مےں کمزور طبقات کو نظر انداز کر رہے ہےں جس سے غربت اور محرومی مےں اضافہ ہو رہا ہے۔ دنےا بھر کی طرح پاکستان مےں بھی غربا کی اکثرےت خواتےن پر مشتمل ہے جس کی وجہ سے عدم مساوات‘ امتےازی سلوک‘ قرضہ کی سہولتوں کا فقدان‘ ملکوں کے مابےن تجارت کے بجائے مخالفت پر زور اور ارباب اختےار کی عدم دلچسپی ہے۔ اسی موقع پر تقرےب کے مہمان خصوصی سارک چےمبر کے نائب صدر افتخار علی ملک نے کہا کہ سارک ممالک مےں خواتےن کی تنخواہےں مردوں کے مقابلہ مےں اوسطً 40 فےصد تک کم ہےں جبکہ چےن مےں تعلےم چھوڑنے والوں مےں سے 80 فےصد لڑکےاں ہےں، جبکہ پاکستان مےں 60 فےصد سے زےادہ غرےب اور 71 فےصد لڑکےاں ثانوی درجے کی تعلےم سے محروم ہےں۔