سنی اتحاد کونسل کے زیراہتمام سانحہ واہگہ بارڈر کیخلاف ملک گیر یوم احتجاج منایا گیا

08 نومبر 2014

لاہور + گوجرانوالہ (خصوصی نامہ نگار + نمائندہ خصوصی) چیئرمین سنی اتحاد کونسل صاحبزادہ حامد رضا کی اپیل پر سنی اتحاد کونسل کے زیراہتمام سانحہ واہگہ بارڈر کیخلاف ملک گیر یومِ احتجاج منایا گیا۔ اس سلسلہ میں جمعہ کے اجتماعات میں سانحہ واہگہ بارڈر کیخلاف مذمتی قراردادیں منظور کی گئیں اور علمائے اہلسنّت نے قتل ناحق کیخلاف اور انسانی جان کی حرمت کے حق میں خطباتِ جمعہ دیئے جبکہ نمازجمعہ کے بعد مساجد میں شہدائے واہگہ بارڈر کیلئے قرآن خوانی کی گئی اور احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ اس موقع پر صاحبزادہ حامد رضا نے جامعہ رضویہ میں جمعہ کے اجتماع سے خطاب کرتے ہوئے کہا دھماکے کرنیوالے پاکستان دشمن طاقتوں کے ایجنٹ ہیں، دہشت گرد موت کے سوداگر اور کرائے کے قاتل ہیں۔ سانحہ واہگہ بارڈر حکومتی اداروں کی نااہلی کا نتیجہ ہے، دھماکے میں اندرونی اور بیرونی دونوں ہاتھ ملوث ہیں۔ حکومت کی توجہ ملکی سلامتی کی بجائے اپنے اقتدار کے تحفظ پر ہے۔ طارق محبوب صدیقی نے کراچی میں خطاب کرتے ہوئے کہا واہگہ بارڈر کا سانحہ پاکستانیت پر حملہ ہے۔ مفتی محمد سعید رضوی نے سمندری میں خطاب کرتے ہوئے کہا سانحہ واہگہ بارڈر حکومتی نااہلی و ناکامی کا ثبوت ہے۔ مولانا وزیرالقادری نے کوئٹہ میں خطاب کرتے ہوئے کہا دہشت گردی کو کچلنے کیلئے آپریشن ضربِ عضب کا دائرہ پورے ملک میں پھیلایا جائے۔ سیّد جوادالحسن کاظمی نے چکوال میں خطاب کرتے کہا سانحہ واہگہ بارڈر سے حکمرانوں کی آنکھیں کھل جانی چاہئیں۔ منڈی بہاﺅ الدین میں صاحبزادہ عمار سعید سلیمانی، فیصل آباد میں صاحبزادہ حسین رضا، چھانگامانگا میں ارشد مصطفائی، گجرات میں صاحبزادہ مطلوب رضا، جھنگ میں مولانا فیض سیالوی، لاہور میں مفتی محمد حسیب قادری، پشاور میں مفتی فضل جمیل، گوجرانوالہ میں مولانا محمد اکبر نقشبندی نے اجتماعات سے خطاب کیا اور احتجاجی مظاہروں کی قیادت کی۔ مصطفی اشرف رضوی، مفتی غلام حسن، مولانا محبت علی، مفتی محمد نعیم، مولانا محمد علی برکاتی، مولانا محمد آصف جامی، مولانا نذیر احمد اور دیگر علماءنے جمعہ کے اجتماعات سے خطاب کرتے ہوئے کہا خود کش حملے حرام ہیں اور خود کش حملہ ایک خود کشی ہے۔ گوجرانوالہ میں علاوہ ازیں نماز جمعة المبارک جامع مسجد فیض مدینہ میں منعقدہ احتجاجی جلسہ سے الحاج مولانا محمد اکبر نقشبندی، الحاج سرفراز احمد تارڑ، مفتی محمد حسین صدیقی، غلام نبی جماعتی، حافظ محمد منشاءقادری، صاحبزادہ عمار سعید سلیمانی، مولانا محمد خالد حسن، قاری غلام سرور، قاری محمد اعظم چشتی، حافظ محمد رفیق قادری، محمد افضل کیلانی اور دیگر نے خطاب کیا۔
یوم احتجاج