50 فیصد لوگ صاف پانی نہ ملنے سے بیماریوں کا شکار ہیں: گورنر پنجاب

08 نومبر 2014

لاہور (نیوز رپورٹر، خصوصی رپورٹر، سٹاف رپورٹر)  پینے کے گندے پانی کے باعث ہسپتال مریضوں سے بھرے پڑے ہیں۔ مل جل کر صحت کے مسائل حل کرنا ہونگے۔ ان خیالات کا اظہار گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے پاکستان میڈیکل ایسوسی ایشن کی 31 ویں میڈیکل کانفرنس کے دوران کیا۔ اس موقع پر مشیر صحت خواجہ سلمان رفیق، ڈاکٹر یاسمین راشد، ڈاکٹر اشرف نظامی، ڈاکٹر تنویر انور، ڈاکٹر اظہار چودھری ودیگر موجود تھے۔ گورنر پنجاب نے کہا کہ پاکستان کے اندر اس وقت 50 فیصد لو گ گندے پانی کے باعث مختلف بیماریوں کا شکار ہیں ہسپتال بھرے پڑے ہیں ہر حال میں عوام کو پینے کا صاف پانی مہیا کرنا ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ ہماری حکومتیں اربوں روپے کے صا ف پانی کے پلانٹ لگانے پر خرچ کر رہی ہے مگر ایسا لگتا ہے تو پلانٹ لگائے ہی نہیں جاتے یا پھر دو نمبر پلانٹ لگا دیئے جا تے ہیں اس لیے ایسے عناصر کے خلاف سخت ایکشن لینا چاہیے اور ایسے افراد کا احتساب ضروری ہے۔ انہوں نے کہا کہ ترقی یافتہ ممالک میں ڈاکٹر کے تجویز کردہ نسخہ کے بغیر میڈیکل سٹور سے ادویات نہیں ملتیں ہمارے ہاں بھی ایسا سخت قانون ہونا چاہیے اور ہمیں مل جل کر صحت کے مسائل کا حل تلاش کرنا ہے۔ دریں اثنا گورنر پنجاب چودھری محمد سرور نے ریسکیو 1122 خیبر پی کے 57 ریسکیو کی پاسنگ آئوٹ سے بھی خطاب کیا۔ ڈی جی ریسکیو 1122 خیبر پی کے ڈاکٹر اسد علی خان، ڈی جی ریسکیو پن جاب ڈاکٹر رضوان نصیر اور دیگر سرکاری اور غیرسرکاری افسران نے بھی تقریب میں شرکت کی۔