عمران کو بتا دیا تھا استعفوں کے معاملے پر پارٹی تقسیم ہوجائیگی: جاوید ہاشمی

08 نومبر 2014

ملتان (سپیشل رپورٹر) پاکستان تحریک انصاف کے سابق صدر و سابق ایم این اے مخدوم سید جاوید ہاشمی نے کہا ہے کہ پی ٹی آئی میں رہتے ہوئے ہمیشہ دیانت داری سے قیادت کو مخلصانہ مشورے دیئے۔ آئین کے تحت استعفوں کی اجتماعی تصدیق ممکن نہیں ہے عمران خان کو بتا دیا تھا کہ استعفوں کے معاملہ پر پارٹی تقسیم ہوجائے گی بعض قوتوں نے مجھے فارورڈ بلاک بناکر پارلیمنٹ میں رہنے کا مشورہ دیا جسے میں نے مسترد کر دیا مخصوص قوتیں اپنے مذموم مقاصد کے لئے سپریم کورٹ اور پاک فوج کو استعمال کرنا چاہتی تھیں مگر میں راستے کی دیوار بن گیا۔ عمران خان کے سپریم کورٹ سے دھاندلی کے الزامات کی تحقیقات کے مطالبہ کو حکومت کو فی الفور مان لینا چاہئے، کسی جمہوری پارٹی کی مضبوطی سے ملک میں جمہوریت مضبوط اور پاکستان مستحکم ہوگا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز اپنی رہائش گاہ پر صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے مزید کہا کہ حکومت کو لاحق خطرات اب ٹل چکے ہیں تاہم خطرات مکمل طور پر ختم نہیں ہوئے یہ کسی بھی وقت پھر سر اٹھا سکتے ہیں۔ اگر عمران خان اپنا دھرنا ختم کر دیتے ہیں تو یہ کسی کی فتح یا کسی کی شکست نہیں ہو گی حکومت کو اب اپنی غلطیاں دہرانا نہیں چاہئے۔ میں نے ہمیشہ دھرنا سیاست کی مخالفت کی تھی میں جانتا ہوں کہ کوئی ایک سکندر نما شخص ایک بندوق لیکر پورے نظام کا جھٹکا کر دیتا ہے اس لئے کمزور نظام کو مزید کمزور کرنے کی بجائے اسے مضبوط کرنا چاہئے۔ انہوں نے مزید کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ ہمیں ملکر عمران خان اور تحریک انصاف کی مدد کرنی چاہئے اس پارٹی کو مزید پھلنا پھولنا چاہئے کیونکہ اگر جمہوری جماعت مضبوط ہو گی تو پھر ملک میں جمہوریت مضبوط ہوگی۔ آج پی ٹی آئی کو مٹانے کا نہیں بلکہ پی ٹی آئی کو بچانے کا وقت ہے۔ انہوں نے کہا کہ تحریک انصاف میں کوئی بھی رکن اسمبلی استعفیٰ نہیں دینا چاہتا اور نہ ہی استعفے دینے چاہئیں۔