تحریک انصاف کے روئیے میں تبدیلی‘ حکومت کیساتھ مذاکرات کی بحالی کا امکان

08 نومبر 2014

اسلام آباد (محمد نواز رضا/ وقائع نگار خصوصی) باخبر ذرائع سے  معلوم ہوا ہے  پاکستان تحریک انصاف  کے طرزعمل میں نما یاں تبدیلی کے بعد  حکومت اور تحریک انصاف کے درمیان آئندہ ہفتے  مذاکرات کی بحالی کا امکان ہے۔  سراج الحق  مذاکراتی عمل میں حکومت کی عدم دلچسپی کا  شکوہ کرچکے ہیں، شاہ محمود قریشی جنہوں نے عمران خان کی ہدایت پر حکومت سے مذاکرات ختم کر دئیے تھے، اب مذاکرات کی بحالی کی دہائی دے رہے ہیں۔ اب وہ  بین السطور انتخابی دھاندلی کے معاملے کی تحقیقات مکمل نہ ہونے تک سپیکر قومی اسمبلی کو اپنے ارکان کے استعفے’’منجمد‘‘ رکھنے کی خواہش کا اظہار کررہے ہیں۔ جب ان سے پوچھا گیا کہ وہ کب قومی اسمبلی میں قائد حزب اختلاف کے ساتھ  والی اپنی نشست پر براجمان ہوں گے؟ تو شاہ محمود قریشی نے برجستہ جوابدیا کہ’’اگر انتخابات 2013ء کی  تحقیقات کے نتیجہ میں شفافیت ثابت ہوجائے تو ہم اسمبلیوں میں آکر اپنا کردار ادا کریں گے‘‘۔ اسحاق ڈار  اتوار کو وطن واپس آرہے ہیں، وہ  عمران خان اور شاہ محمود قریشی سے رابطہ کرکے مذاکرات کی دعوت دیں گے۔ تحریک انصاف سپریم کورٹ کے تحت انتخابی دھاندلیوں پر تحقیقات پر آمادہ ہوگئی ہے جب اس نے جسٹس (ر) ناصر اسلم زاہد جیسے ججوں سے تحقیقات کی حمایت کی ہے۔     اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ دھاندلی کی تحقیقات کے معاملہ پر وزیراعظم سپریم کورٹ کو خط لکھ چکے ہیں تاہم   انہوں اس بات کا عندیہ دیا کہ ٹی او آر تبدیلی نہیں لائی جاسکتی۔ ذرائع کے مطابق سراج الحق بھی وزیراعظم کی چین سے واپسی کے منتظر ہیں اور وہ عمران خان سے ہونیوالی ملاقات سے آگاہ کریں گے۔ عمران خان کے مطالبے پر مذاکرات  کی بحالی حکومت دھرنا ختم کرنے کی شرط عائد کریگی۔