پنجاب میں ڈاکٹروں پر اپنی مرضی سے پوسٹنگ اور ٹرانسفر کرانے پر پابندی عائد کر دی گئی

08 نومبر 2013

لاہور (ندیم بسرا) محکمہ صحت پنجاب نے صوبے بھر کے سرکاری ڈاکٹرز کے اپنی مرضی سے ایک ہسپتال سے دوسرے ہسپتال  جانے کے اختیارات ختم کر دیئے اور تمام سرکاری ٹیچنگ ہسپتالوں کے سربراہان کو ڈاکٹرز کو اجازت نامے (NOC) دینے سے روک دیا۔ ذرائع کے مطابق محکمہ صحت پنجاب نے ٹیچنگ ہسپتالوں کے سربراہان کو ہدایات جاری کی ہیں کہ وہ کسی بھی ڈاکٹر کو پوسٹنگ ؍ ٹرانسفر کیلئے این او سی جاری نہیں کریں گے اگر کسی بھی وائس چانسلر، پرنسپل، ایم ایس، ای ڈی او یا ادارے کے ڈین نے ڈاکٹر کو این او سی جاری کیا تو اس کے خلاف سخت کارروائی ہوگی۔ مزید بتایا گیا ہے کہ ڈاکٹر اس سے قبل ایک ہسپتال  سے دوسرے ہسپتال میں جانے کیلئے اپنے ادارے کے سربراہ اور دوسرے ادارے کے سربراہ سے این او سی  حاصل کر لئے تھے جس کا مقصد بعض دفعہ اعلیٰ تعلیم کا حصول بھی تھا کیونکہ لاہور کے متعدد ہسپتالوں میں فیکلٹی مکمل ہی نہیں۔ انہیں ایف سی بی ایس، ایم سی پی ایس، ایم فل اور دیگر تعلیم کیلئے دوسرے ہسپتالوں میں جانا پڑتا ہے اس مقصد کیلئے ڈاکٹر اپنا تبادلہ بھی کروا لیتے تھے بعض دیگر وجوہات پر سیٹ کی  اپ گریڈیشن  کیلئے بھی این او سی حاصل کر لیتے تھے مگر محکمہ صحت پنجاب نے اس پر مکمل پابندی عائد کر دی ہے۔  اس صورتحال پر سیکرٹری  صحت حسن اقبال سے متعدد بار ان کے سرکاری موبائل پر رابطہ کیا مگر انہوں نے موبائل فون نہیں سنا دوسری جانب اس نوٹیفکیشن پر ڈاکٹر  برادری میں شدید ردعمل پایا جاتا ہے ان کا کہنا تھا کہ وہ اس نوٹیفکیشن کے خلاف اعلیٰ عدالت سے رجوع کریں۔