ممبئی حملہ کیس: وکیل صفائی کے بھارتی گواہوں کی جرح کے ریکارڈ پر اعتراضات

08 نومبر 2013

 اسلام آباد (نامہ نگار) ممبئی حملہ کیس میں وکیل صفائی نے بھارتی گواہوں پر جوڈیشل کمشن کی جرح کے ریکارڈ پر اعتراضات کر دیئے۔ انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں ممبئی حملہ کیس میں سفارتی ذرائع سے بھارت سے آنے والا سربمہر ریکارڈ پیش کر دیا گیا۔ ریکارڈ میں بھارتی گواہوں پر کی گئی جرح اور ریکوری میمو شامل ہے۔ وکیل صفائی ریاض اکرم چیمہ نے سفارتی ذرائع سے بھجوائے گئے ریکارڈ پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا ہے۔ ان کا موقف ہے کہ جوڈیشل کمشن کے ہمراہ ایک عدالتی ریکارڈ کیپر بھجوایا گیات ھا۔ قانونی طور پر جوڈیشل کمشن کا ریکارڈ اس ریکارڈ کیپر کے حوالے کیا جانا تھا لیکن اسے یہ ریکارڈ نہیں دیا گیا جو کہ بدنیتی ہے۔ انہوں نے اس خدشے کا اظہار کیا کہ ریکارڈ میں ہیر پھیر ہو سکتی ہے، اگر بھارت کی جانب سے رپورٹ سفارتی ذرائع سے آئی ہے تو پھر ہماری رپورٹ بھی سفارتی ذرائع سے ہی جانی چاہئے تھی۔ انہوں نے کہا کہ بھارتی مجسٹریٹ پر جرح کرتے ہوئے ہم نے پوچھا کہ تمہارا قانون کہتا ہے کہ اعترافی بیان تین دن کے اندر لیا جائے جبکہ اجمل قصاب کا اعترافی بیان 82 دن بعد لیا گیا جس کا کوئی جواب ہی نہیں دیا گیا، بھارت اس کیس سے متعلقہ کوئی ٹھوس ثبوت فراہم نہیں کر سکا۔