محکمہ بلدیات سندھ کے 12 ہزار 9 سو ملازمین کی برطرفی کا نوٹس واپس

08 نومبر 2013

کراچی (این این آئی) حکومت سندھ نے بلدیاتی اداروں سے برطرف کئے جانے والے 12900  ملازمین کی برطرفی کا فیصلہ واپس لے لیا  وزیر اعلیٰ سندھ نے کنٹریکٹ اور ایڈہاک ملازمین کے معاملات کا دوبارہ جائزہ لینے کے لیے متعلقہ حکام سے دوبارہ تفصیلی رپورٹ طلب کرلی۔ سندھ کے وزیر اطلاعات و بلدیات شرجیل انعام میمن نے کہا کہ محکمہ بلدیات سے کسی بھی ملازم کو برطرف نہیں کیا جائے گا۔  12900ملازمین کو برطرف کرنے کا  فیصلہ منسوخ کردیا گیا ہے  اس معاملے میں جو افسران ملوث ہیں ان کے خلاف تادیبی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔ قبل ازیں بلدیہ عظمیٰ کراچی اور ادارہ ترقیات کراچی (کے ڈی اے) کے ملازمین نے جمعرات کو کے ایم سی ہیڈ آفس سوک سینٹر میں احتجاج کیا ۔ملازمین لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل 2013اور 12900ملازمین کی برطرفی کے فیصلے کے خلاف احتجاج کررہے تھے۔ حکومت سندھ کی جانب سے 12900 ملازمین کی برطرفی کے فیصلے کو واپس لینے کے اعلان کے بعد احتجاج  ختم کر دیا اور ملازمین میں خوشی کی لہر دوڑ گئی۔ ملازمین نے حکومت سندھ سے مطالبہ کیا ہے کہ کہ لوکل گورنمنٹ ترمیمی بل 2013کو واپس لیا جائے۔