لُو سے کس طرح بچا جا سکتا ہے

08 جولائی 2013

فوزیہ سعید
 شدید گرمی میں ہمارا جسم اس قابل نہیں رہتا کہ جسم کی گرمی کو کم کر سکے جسم میں شدت گرمی کی علامات ظاہر ہونا شروع ہو جاتی ہیں مثلاًاعصاب یا پھٹوں کا مسئلہ یہ نسبتاً کم خطرناک ہوتا ہے۔ اس کی ابتدائی علامات ٹانگ بازو اور پٹھوں میں اکڑاہ شامل ہے۔ جب جسم کا درجہ حرارت کم نہیں ہو پاتا تو جسم میں مزید گرمی بڑھ جاتی ہے اور اس کی مندرجہ ذیل علامات ہیں۔
 جسم میں پانی کی کمی ‘ تھکاوٹ‘ کمزوری‘ سردرد‘ نکسیر وغیرہ آنا لمبی اور بڑی سانسیں ‘ جب مرض بہت زیادہ خراب جائے تو اس کو سرسام ہو جاتا ہے یا لو لگ جاتی ہے۔ جسم زیادہ دیر تک درجہ حرارت برقرار نہیں رکھ سکتا۔ جسم کا درجہ حرارت مزید بڑھ جاتا ہے۔ 42 C یا 104 F پر جا پہنچا ہے۔ جس کی علامات یہ ہیں۔ مسلسل ۔ جلد کی خشکی ‘ پانی کی شدید کمی‘ شدید سردرد ‘ چکر آنا ‘کمزوری ‘ تھکاوٹ ‘ بے ہوشی۔ اس حالت میںجتنا بھی جلدی ہو سکے جسم کا درجہ حرارت کم کرنا چاہئے۔گرمی میں زیادہ دیر رہنا‘ شدید گرمی میں رہنا یا پرہجوم اور کم ہوا دار جگہ پر ہونا۔ یا کچھ ادویات کا استعمال بھی جلد کو حساس بنا دیتی ہےں جس وجہ سے جلد زیادہ گرمی جذب کرتی ہے۔
لو لگنے کے نقصانات :اس سے جلد زیادہ متاثر ہوتی ہے سورج کی گرمی جلد کے لئے نقصان دہ ہوتی ہے ، اسے اعصاب اور پٹھوں کو شدید کھچاﺅ ہوتا ہے۔ جو دو سے پانچ دنوں میں ٹھیک ہو جاتا ہے۔
زیادہ دیر سورج میں رہنے سے جلد پر عمرکے اثرات ظاہر ہونے شروع ہو جاتے ہیں۔ اس سے جلد کا سرطان بھی ہو سکتا ہے۔ اس قسم کے کینسر کا علاج ممکن نہیں۔ سرسام کی وجہ سے پانی کی کمی بہت خطرناک ہو سکتی ہے۔ اگر حالت بہتر نہ ہو تو فوراً قریبی مرکز صحت سے رابطہ کریں۔ سرسام یا لو سے کس طرح بچ سکتے ہیں۔ ؟
٭.... زیادہ دیر تک سورج کی گرمی میں نہ رہیں، 11:00 سے 3 بجے تک سورج کی گرمی کی شدت بہت زیادہ سخت ہوتی ہے۔باقاعدگی سے جوس پئیں۔ پانی صحرا سمندر اور برف سورج کی روشنی کو منعکس کرتی ہیں اس طرح یہ آدمی کی جلد پر زیادہ اثر انداز ہوتے ہیں۔
احتیاطی تدابیر:
٭.... سورج کی روشنی سے محفوظ رہیں
٭.... جسم کے درجہ حرارت کو کم کرنے سے تولیہ بھگو کر جسم سے لگائیں تاکہ درد کم ہو۔جسم کو جتنی جلدی ہو سکے ٹھنڈا کرنے کی کوشش کریں۔
٭.... جسم کے چھالوں کومت پھوڑیں
٭.... پٹھوں اعصاب کے کچھاﺅ کی صورت میں زیادہ پانی اور جوس پیئیں اور ٹھنڈہ پانی کے بجائے مناسب پانی سے نہائیں۔ مریض کے جسم کو گیلا رکھیں اور اگر پانی کی کمی ہو تو پنکھے کے نیچے لٹا دیں
٭.... پنکھا نہ ہونے کی صورت میں کس بھی طریقے سے مریض کے جسم کو ٹھنڈا کریں۔مریض کو فوراً ڈاکٹر کے اس لے جانا چاہئے جب جسم کے بڑے حصے چھالے ہو جائیں یا سوزش ہو جائے۔
جب بہت زیادہ چھالے ہو جائیں۔
 بخار نکسیر آتی ہے۔ قے آتی ہے درد ہو یا دل کی دھڑکن تیز ہو۔ زیادہ دیر سورج کی گرمی میں نہ رہیں۔ بچوں کو زیادہ تیز دھوپ میں مت کھیلنے دیں۔ جسم کے درجہ حرارت تولیہ بھگو کر کم کریں۔ ٹھنڈی جگہ پر رہیں۔ اور احتیاط کریں پرہیز علاج سے بہتر ہے۔
finallllllllllllllllllllllllllllllllllllllllllllllllllll