سپرے نہ ہونے سے ڈینگی کے حملے شروع روزانہ 10 سے 12 مریض ہسپتالوں میں رپورٹ ہونے لگے

07 نومبر 2017

لاہور( نیوز رپورٹر) صوبائی دارالحکومت میں ڈینگی سپرے نہ ہونے سے شہریوں پر ڈینگی مچھر کا خوف بڑھ گیا۔ لاہور کے سرکاری ہسپتالوں میں ڈینگی کے روزانہ 10سے12مریض رپورٹ ہوتے ہیں۔ محکمہ صحت پنجاب، چیف ایگزیکٹو آفیسر محکمہ صحت پنجاب اور سرکاری ہسپتالوں میں شعوری مہم دم توڑ گئی۔ وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے ڈینگی مچھر کے خاتمے کے اقدامات کی نفی کرتے ہوئے محکمہ صحت پنجاب سی ای او لاہور ڈاکٹر یا د اللہ اور ہسپتالوں کی ایڈمنسٹریشن نے رسمی اقدامات کرنا بھی چھوڑ دیئے، لاہور میں گزشتہ 3برسوں میں رپورٹ ہونے والے اقبال ٹائون گلش بلاک، نیلم بلاک، وادی، ستلج ،ہنزہ بلاک ، دروغہ والا، جوہر ٹائون (آر ، جے ، ایچ بلاک) ٹائون شپ کالج روڈ سمن آباد ( چودھری کالونی گلذیب کالونی ) ساندہ ، اسلام پورہ، گڑھی شاہو کے علاقے میں رواں برس ڈینگی کا سپرے نہ ہو سکا، جبکہ گھروں میں ضلعی محکمہ صحت پنجاب، ڈائریکٹوریٹ جنرل پنجاب اور محکمہ صحت پنجاب کی شعوری مہم بھی جاری نہ رہ سکی جس کے نتیجے میں صوبائی دارالحکومت میں ڈینگی ایک بار پھر سے اٹھانے لگا ایک ہفتے کے دوران لاہور کے سرکاری ہسپتالوں میں ڈینگی کے 50 مریض جبکہ پرائیویٹ ہسپتالوں میں30کے قریب مریض رپورٹ ہو چکے ہیں۔ میو ، جناخ گنگا رام، سروسز اور جنرل ہسپتال میں ڈینگی وارڈ کے مریضوں کی جگہ دیگر وارڈ کے مریض داخل کئے جا رہے ہیں جبکہ ہسپتالوں کی ایمرجنسی میں آنے والے ڈینگی کے مریضوں کو معمول کا بخار کہہ کر واپس بھجوا دیا جاتا ہے۔