محکمہ صحت کی پرائیویٹائزیشن کسی صورت قابل قبول نہیں : رخسانہ نور

07 نومبر 2017

کبیروالا (نامہ نگار) محکمہ صحت کی پرائیوٹائزیشن کسی صورت بھی قابل قبول نہیں ،حکومت کے پاس میٹرومنصوبوں اور اپنے پروٹوکول کے لئے پیسے ہیں،لیکن نیشنل ہیلتھ پروگرام کے ملازمین کے بقایا جات دینے کیلئے فنڈز نہیں ہیں ،حکومت نے 16نومبر تک محکمہ صحت کی پرائیوٹائزیشن کا فیصلہ واپس نہ لیا تو 20نومبر سے شروع ہونیوالی ’’پولیو مہم‘‘ میں حصہ نہیں لیں گے،ان خیالات کا اظہارنیشنل ہیلتھ پروگرام ایمپلائز ایسوسی ایشن پنجاب کی صدر میڈم رخسانہ انورنے ضلعی جنرل سیکرٹری اللہ وسایازیدی کی جانب سے دئیے گئے استقبالیہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا ۔انہوں نے کہا کہ نیشنل ہیلتھ پروگرام کے ملازمین کیلئے ’’آن لائن سیلری ‘‘ کی منظوری ،یقینا اہم کامیابی ہے ،تاہم اپنے حقوق حاصل کرنے اور مطالبات تسلیم کرنے کیلئے ابھی مزید جنگ لڑنے کی ضرورت ہے ،جس کے لئے نیشنل ہیلتھ پروگرام سے وابستہ تمام ملازمین کو مزید منظم ہوکر اپنی جدوجہد کرنا ہوگی ۔انہوں نے کہا کہ حکومت نے نیشنل ہیلتھ پروگرام کے ملازمین کے لئے سروس سڑیکچر کامعاملہ دبایا ہوا ہے ۔ استقبالیہ سے روزینہ خان ،اللہ وسایا زیدی اور آنسہ بے نظیر نے خطاب کرتے ہوئے نیشنل ہیلتھ پروگرام کے تمام ملازمین کو آن لائن سیلری ہونے پر مبارک باد پیش کی ۔