ڈولفن فورس

07 نومبر 2017

سجاد اظہر پیرزادہ
sajjadpeerzada1@hotmail.com
541دن پہلے یکم اپریل 2016ء کو‘اور631دن قبل‘ یکم جنوری 2016ء کو لاہورمیں سٹریٹس کرائم کولگام دینے‘ایمرجنسی رابطے پر مددفراہم کرنے اورسڑکوںپر حادثہ کا شکار ہوجانے والے شہریوںکوتحفظ پہنچانے کے لئے قائم کی گئی ’’ڈولفن فورس‘‘ اور ’’پیروفورس‘‘کے متعلق واقعاتی حقائق سامنے آئے ہیں۔ نوائے وقت کرائم کارنرکو اپنے ذرائع سے موصول ہونے والی اہم رپورٹس کے مطابق‘یکم اپریل 2016ء سے آج 7 نومبر 2017ء تک ڈولفن فورس کے اِن18مہینوں اور7دنوںمیں‘ جبکہ یکم جنوری 2016ء سے آج تک لاہور پولیس کی 270بیٹس میں سے ایک وقت میں 120بیٹس پرڈولفن وپیروفورس کے کام کرنے کے سبب اِن بیٹس (علاقوں)میںبڑے اور چھوٹے جرائم میں 30سے 35فیصد کمی واقع ہوئی ہے۔لاہور پولیس کی ڈولفن وپیروفورس کی کارکردگی سے متعلق یہ حیران کن اعداد و شمار 18ماہ کے عرصے پر محیط ہیں،مگرحقائق بتاتے ہیں کہ ڈولفن فورس کی کارکردگی میں پچھلے 10ماہ سے لگاتاراضافہ ہوا ہے، اس کی وجہ یہ سامنے آئی ہے کہ پولیس کو روایتی کلچر سے نکالنے اور پروفیشنل فورس بنانے کی کوششوں میںمصروف ڈی آئی جی آپریشنز حیدر اشرف کی زیرنگرانی پولیس کے ایک قابل افسرفیصل شہزادنے ڈولفن وپیروفورس کی کمان سنبھالی ہوئی ہے،یہی وجہ ہے کہ لاہور کے وہ خطرناک 125سٹریٹ کریمنلز بھی قانون کی گرفت میں آچکے ہیں،راہ چلتے مسافروںکاجنہوںنے سکون کے ساتھ جینا مشکل کیا ہوا تھا۔
نوائے وقت کرائم کارنرکی جانب سے مختلف ذرائع سے حاصل کی گئیںرپورٹس کے مطابق‘ حقائق یہ ہیں کہ اپنی تشکیل کے بعدڈولفن فورس نے پچھلے 18مہینوں میں شہر کی سڑکوںپہ حادثہ کا شکارہونے والے21 ہزار 303 شہریوںکی مددکی۔65گمشدہ بچوںکی والدین تک رسائی کو ممکن بنایا۔ جب 19 سو 83 شہریوں کووہیکلز بریک ڈائون پر مشکلات کا سامنا کرنا پڑا تو‘ فوری طور پہ ڈولفن فورس کے جوانوںنے موقع پر پہنچ کے ان کی داد رسی کی۔شہر کی 11 ہزار419 مختلف شاہراہوں پر ٹریفک کو بحال کر کے اذیت کا شکار بنے شہریوںکوپہلی باراس بات کا تاثردیاگیا کہ لاہور پولیس کی ڈولفن فورس شہریوںکی مشکلات حل کرنے میں بھی پیش پیش ہے۔
لاہور کے 6ڈویژنز میں ڈولفن فورس کی کل 130ٹیموں نے اپنے قیام سے لے کر اب تک جن11ہزار4سو19ٹریفک سے بند ہوئیں سڑکوںکو بحال کروایا،جن 3063بزرگ و بیمار شہریوںکو سڑک پار کرائی، جن 65بچوںکو ان کے لواحقین کے حوالے کیا، جن38مالکوںتک ان کی گمشدہ اشیاء پہنچائیں،جن 1182شہریوںکی روڈایکسیڈنٹ میں مدد کی،جن 1983شہریوںکی وہیکل بریک ڈائون میں مدد کی، جن 1757مسافروں کو ان کی منزل تک پہنچنے کے لئے راستے کا پتہ بتا کر رہنمائی کی، پوری پولیس کیلئے ان سب قابل مثال کاموں کی تفصیلات کے مطابق ‘ سٹی ڈویژن میں ڈولفن کی کل 11ٹیموںنے ٹریفک سے بلاک1936جگہوںکو کھلوایا،571شہریوںکوسڑک پار کرائی، 21گمشدہ بچوںکو لواحقین کے سپرد کیا، 6قیمتی اشیاء کو مالکوںتک پہنچایا،125شہریوںکی روڈ ایکسیڈنٹ میں مدد کی۔ 101شہریوںکی وہیکل بریک ڈائون میں مدد کی۔ 243شہریوںکی راستہ کی رہنمائی میں رہنمائی کی ، 20چوری شدہ کاروںکی برآمدگی کی ہے ۔ سول لائن ڈویژن میں موجود ڈولفن فورس کی کل 20ٹیموںنے ٹریفک سے بند ہوئیں 2662 شاہراہوںکو بحال کروایا،617بزرگ و بیمار شہریوںکو سڑک پار کرائی،7گمشدہ بچوںکو لواحقین کے حوالے کیا، 11گمشدہ مالکوں تک نقدی و قیمتی اشیاء پہنچائیں، 271افراد کی روڈ ایکسیڈنٹ میںمدد کی، 490شہریوںکی وہیکل بریک ڈائون میںمدد کی، 500افراد کو ان کی راہ دکھائی،18چوری شدہ کاروںکی برآمدگی کی۔ ماڈل ٹائون ڈویژن میں ڈولفن کی کل 35ٹیموں نے 1881جگہوںکوبحال کرایا،364بزرگ و لاچار شہریوںکو سڑک پار کرائی، 12گمشدہ بچوںکولواحقین کے حوالے کیا، 5گمشدہ قیمتی اشیاء و نقدی مالکوںتک پہنچائیں، 238مسافروںکی روڈ ایکسیڈنٹ کے بعد مدد کی، 380افراد کی وہیکل بریک ڈائون پر داد رسی کی،170شہریوںکی راستہ بتانے میں راہنمائی کی،7چوری شدہ کاروںکی برآمدگی کی۔ کینٹ ڈویژن میں ڈولفن کی 20ٹیموںنے 1396جگہوںکو کھلوایا،438بزرگ شہریوںکو سڑک پار کرائی، 9گمشدہ بچوں کی تلاش میں ان کے والدین کی کامیاب مدد کی، 10گمشدہ اشیاء مالکوںتک پہنچائیں، 237شہریوںکی حادثات کے وقت مددکی،373شہریوںکی وہیکل بریک ڈائون پر داد رسی کی، 196مسافروںکو ان کے ٹھکانوںکی راہ دکھائی۔ صدر ڈویژن میں ڈولفن کی 28ٹیموںنے 1690سڑکوںکوٹریفک کے اژدھام سے آزاد کرایا،578بزرگ شہریوںکو سڑک پار کرائی، 10گمشدہ بچوںکو لواحقین کے سپر دکیا، 4گمشدہ قیمتی اشیاء مالکوںتک پہنچائیں، 147لوگوںکی روڈ ایکسیڈنٹ میں مدد کی، 249وہیکل بریک ڈائونز پر شہریوںکی مدد کی، 310افرادکو ان کا راستہ بتایا،44چوری شدہ کاروںکی برآمدگی کی۔ جبکہ اقبال ٹائون ڈویژن میں موجود ڈولفن کی 16ٹیموںنے1854راہوںکو ٹریفک کے رش سے نجات دلا کر مسافروںکا سفر آسان بنایا،495بزرگ شہریوںکو سڑک پار کرائی، 6گمشدہ بچوںکو ان کے پیاروں تک پہنچایا، 2قیمتی اشیاء گمشدہ مالکوںتک ان کے پاس پہنچائیں، 164شہریوںکی روڈ ایکسیڈنٹ پر ان کی مدد کی، 390شہریوںکی وہیکل بریک ڈائون کے وقت ان کی داد رسی کی،54چورہ شدہ کاروںکی برآمدگی کرکے 338مسافروںکو انکی منزل کا پتہ بتاکر ڈولفن فورس نے صرف 18ماہ اورخصوصاً10میںیہ ثابت کرنے کی کوشش کی ہے کہ کہ آئی جی (ر) کیپٹن عارف خان کی زیرنگرانی پولیس اب عوام کی جان ، مال و عزت کے تحفظ کی خاطر‘میدان میں ہے۔
عام تاثر ہے کہ پیرو کی گاڑیاں سرکاری پٹرول جلانے کے سوا کچھ نہیں کرتیں‘ نوائے وقت کرائم کانر کودستیاب رپورٹس کے مطابق حقائق مگر یہ ہیں کہ سٹی ڈویژن میں پیرو کی پٹرولنگ کرتی کل 11گاڑیاں، سول لائن ڈویژن میں 14گاڑیاں،کینٹ ڈویژن میں کل 23پٹرولنگ گاڑیاں، ماڈل ٹائون میں کل 21
گاڑیاں، صدرمیں 24گاڑیاں، اقبال ٹائون میں 17گاڑیاں ایس پی ڈولفن و پیروفیصل شہزاد کی ہدایت پر لاہور شہر اور شہریوں کی عزت ، مال و جان کی حفاظت کی خاطرہر وقت سڑکوںپہ رواں دواںہیں۔ان سب ڈویژن میں رپورٹس کے مطابق پیروفورس نے دوران پٹرولنگ ریسکیو 15پرشہریوںکی جانب سے مدد کی اپیل لئے موصول ہوئیں 65738کالوںکو جواب دیااور موقع پر پہنچ کران کی داد رسی بھی کی۔لاہور کو محفوظ بنانے کیلئے 21مہینوںمیں4لاکھ 32ہزار 877مشکوک وہیکلز ، 6لاکھ 59ہزار 310مشکوک موٹرسائیکلز اور 4لاکھ 45ہزار855مشکوک اشخاص کو چیک کیا، اور مختلف جرائم میں ملوث 611ملزمان کو گرفتار کیا ہے۔
ایس پی فیصل شہزاد مجاہد سکواڈکے ساتھ ساتھ محدود وسائل میں جس طرح ڈولفن وپیرو کی کی ذمہ داریاںبھی 10ماہ سے نبھارہے ہیں، اس کے سبب پولیس فورس میں ایک نیا جذبہ پیداہوا ہے۔ ملک میں جاری دہشت گردی و دیگر مختلف سنگین جرائم جیسے واقعات و سانحات سے اگر ایک طرف شہری اپنے آپ کو غیر محفوظ سمجھتے ہیں تودوسری طرف ڈولفن و پیرو کی کارکردگی کے سبب شہریوںمیں یہ تاثر بھی جڑ پکڑنے لگا ہے کہ پولیس اب انکی عزت نفس، مال و زندگی کے تحفظ کے متعلق کچھ نہیں‘ بلکہ بہت کچھ کررہی ہے۔ایس پی مجاہد سکواڈڈولفن و پیرو فیصل شہزاد نے اس سلسلے میں نوائے وقت سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ’’ڈی آئی جی آپریشنز ڈاکٹر حیدر اشرف کی نگرانی میں لاہور کو محفوظ بنانے کے لئے دن رات عملی کوششوںمیں مصروف ہیں، صوبائی دارالحکومت میں قانون نافذ کرنیوالے اداروں کے ساتھ ساتھ مجاہد سکواڈ،پیرو،ڈولفن امن و امان کے قیام کے لیے اپنا کردار ادا کررہی ہے، داخلی و خارجی راستوں پر قائم مستقل ناکہ جات بھی اسی سلسلہ کی ایک کڑی ہیں جہاں پر مجاہد سکواڈ کے افسران و اہلکار اپنی پیشہ وارانہ صلاحیتوں کو بروئے کار لاتے ہوئے دہشت گردی، جرائم کی روک تھام کے لیے شب و روزاس لئے ڈیوٹی پر موجود ہیںکہ قوم بلا خوف و خطر اپنے معمولات زندگی جاری رکھ سکے۔ شہری کسی بھی مصیبت میں مبتلا ہوںتو وہ پولیس ایمرجنسی 15پر بلا خوف و خطر24گھنٹے کال کر سکتے ہیں۔اب تقریباً ہر تھانہ کی حدود میںکم و بیش پولیس کی 110جدید گاڑیوںںپہ پیرو،مجاہد سکواڈ کے اہلکار گشت کررہے ہیںجو کسی بھی قسم کے ہونے والے کرائم کو کنٹرول کرنے میں مقامی پولیس کے معاون و مددگار ثابت ہوتے ہیں۔