جسمانی بحالی کے تین جدید مراکز انڈس ہسپتال انتظامیہ کے حوالے

07 نومبر 2017

اسلام آباد (خصوصی نمائندہ)بین الاقوامی کمیٹی برائے ریڈکراس نے جسمانی بحالی کے تین جدید ترین مرکز انڈس ہسپتال انتظامیہ کے حوالے کردیئے۔ یہ مراکز 2014ءمیں سہ فریقی معاہدہ کے تحت قیام عمل میں لائے گئے تھے۔ اِس معاہدہ میں آئی سی آرسی انڈس ہسپتال نیٹ ورک اور تھل فاو¿نڈیشن شامل تھے۔ لاہور ، کراچی اور مظفرگڑھ کے مقامات پر قائم جسمانی بحالی مراکز سے اب تک 14 ہزار سے زائد معذور افراد مستفید ہو چکے ہیں۔ پہلا مرکز مظفر گڑھ میں مارچ 2015ءمیں قائم کیا گیا تھا جو طیب رجب اردگان ہسپتال کے ساتھ ملحق تھا۔ دوسرا مرکز کورنگی کراچی میں اپریل 2015ءمیں قائم کیا گیا جو انڈس ہسپتال کورنگی کے ساتھ وابستہ تھا۔ تیسرا مرکز لاہور میں اِسی سال کے آخری مہینے یعنی دسمبر میں قائم کیا گیا جو محمد شہباز شریف ہسپتال سے ملحق تھا۔تینوں مراکز معذور افراد کو جدید ترین خدمات فراہم کرتے ہیں۔ جن میں مصنوعی اعضائ، آرتھیٹکس، فزیوتھراپی، وہیل چیئرز اور بیساکھیوں کی فراہمی شامل ہے۔ آئی سی آرسی نے 2015 ءسے لیکر 2017 ءتک ان مراکز کے قیام اور فعالیت پر 170 ملین روپے کی خطیر رقم خرچ کی۔ تکنیکی عملہ کیلئے جدید تربیت، وظائف اور مصنوعی اعضاءکی تیاری کیلئے خام مال بھی بہم پہنچایا گیا۔ انڈس ہسپتال نیٹ ورک تینوں مراکز کے انتظام و انصرام میں خود مختار ہوگی، تاہم آئی سی آرسی خام مال کی فراہمی پر آنے والے اخراجات خود برداشت کرے گی۔ تینوں تنظیمیں مشترکہ طور پر پاکستان میں جسمانی بحالی کی خدمات کی فراہمی کو فروغ دے کر مستحکم بنائیں گی۔ واضح رہے کہ آئی سی آرسی پاکستان میں 1980ءسے جسمانی طور پر معذور افراد کو مصنوعی اعضاءکی فراہمی کیلئے 22 بحالی مراکز کی معاونت کررہی ہے۔