تین روز گزرنے کے باوجود حکومت لوڈشیڈنگ پر قابو پانے میں ناکام

07 نومبر 2017

اسلام آباد (خصوصی نمائندہ) اسموگ کی وجہ سے تین روز گزرنے کے باوجود بھی حکومت ملک میں لوڈ شیڈنگ پر قابو پانے میں بری طرح ناکام ہوگئی بجلی کی ڈیمانڈ صرف 13500 میگاواٹ رہ گئی ہے اور ملک میں بجلی کا شارٹ فال 5000 میگاواٹ سے بھی تجاوز کرگیا ہے ۔ پانی سے بجلی کی پیداوار کم ہوکر صرف 2500 میگاواٹ رہ گئی ہے جبکہ چشمہ کے دو جوہری پلانٹ تاحال بند پڑے ہیں جبکہ نندی پور بھکی حویلی بہادر شاہ ہوتی سمیت سات پاور پلانٹس کو گیس کی فراہمی تاحال ممکن نہیں ہوسکی ہے جس کی وجہ سے کئی ہزار میگاواٹ بجلی سسٹم سے باہر ہے ملک میں پانی سے 7000 میگاواٹ بجلی پیدا ہوتی ہے جو کم ہوکر حکومتی دعوﺅں کے مطابق 250 میگاواٹ رہ گئی ہے۔ ہائیڈرو پاور سے صرف 1000 میگاواٹ بجلی ہی سسٹم میں شامل ہے جس کی بڑی وجہ ڈیموں میں پانی کی کمی ہے جس کی وجہ سے شہری علاقوں میں آٹھ سے دس گھنٹے جبکہ دیہی علاقوں میں دس سے بارہ گھنٹے کی طویل لوڈ شیڈنگ کا سلسلہ جاری ہے جبکہ وفاقی دارالحکومت میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ چھ گھنٹے تک ہے ملتان بہاولپور میں سموگ کی وجہ سے لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ شہروں سے زیادہ ہے ذرائع کے مطابق سموگ کی وجہ سے سسٹم ٹرپ کر جاتاہے۔