لاہور ہائیکورٹ نے اوورسیز پاکستانیوں کے لیے میڈیکل کالجز میں داخلہ پالیسی کے خلاف دائر درخواست پر پنجاب میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل سے پالیسی سے متعلق تفصیلات طلب کر لیں

07 نومبر 2017

لاہور(وقائع نگار خصوصی)لاہور ہائیکورٹ نے اوورسیز پاکستانیوں کے لیے میڈیکل کالجز میں داخلہ پالیسی کے خلاف دائر درخواست پر پنجاب میڈیکل اینڈ ڈینٹل کونسل سے پالیسی سے متعلق تفصیلات طلب کر لیں۔جسٹس شمس محمود مرزا نے اوور سیز پاکستانی طلبہ اریبہ شبیر کی درخواست پر سماعت کی درخواستگزار کی جانب سے عصمت اللہ اور شکیل احمد پاشا عدالت میں پیش ہوئے اور موقف اختیار کیا کہ پی ایم ڈی سی نے اوورسیز پاکستانیوں کے لیے میڈیکل کالجز میں داخلے کے لیے فزکس اور حساب کے مضامین کا انٹری ٹیسٹ لازمی قرار دے دیا درخواستگزار نے موقف اختیار کیا کہ بیرون ملک اے لیول کرنے اور پاکستان میں ایم بی بی ایس میں داخلے کے خواہش مند طالبعلموں نے پی ایم ڈی سی پالیسی 2015 کے تحت بیرون ملک فزکس اور حساب کے مضامین نہیں پڑھے 2016 میں اچانک پالیسی تبدیل ہونے سے ایم بی بی ایس میں داخلے کے لے فزکس اور حساب کا پرچہ لازمی قرار دے دیا ہے درخواست گزار نے قانونی نقطہ اٹھایا کہ اب میڈیکل کالج میں داخلے کے لیے ایسے مضامین کا اینٹری ٹیسٹ کیسے دیا جاسکتا ہے جو پڑھے ہی نہیں گئے ۔