سابق ڈی جی کے ڈی اے ناصر عباس کے ریمانڈ میں توسیع

07 نومبر 2017

کراچی (وقائع نگار )احتساب عدالت نے سابق ڈی جی کے ڈی اے ملزم ناصر عباس کے جسمانی ریمانڈ میں 14 نومبر تک توسیع کردی ہے ۔پیر کو کراچی کی احتساب عدالت کے روبرو اختیارات کا ناجائز استعمال سے متعلق سابق ڈی جی کے ڈی اے ملزم ناصر عباس کے خلاف سماعت ہوئی۔ ملزم کے وکیل عامر نقوی نے کہا کہ 2 نومبر کو میرے موکل کو ان کے سابق دفتر میں ہتھکڑی لگا کر لے جایا گیا۔ ناصر عباس پر اب تک الزام ثابت ہوا نہ ہی فرد جرم عائد کی گئی۔ نیب کا یہ عمل آرٹیکل 14 کی خلاف ورزی کی گئی۔ ملزم کے وکیل عامر نقوی نے کہا کہ ناصر عباس کی سابق دفتر کی ویڈیو ٹی وی پر چلتی رہی۔ ریمانڈ نہ دیا جائے ورنہ یہ پورے شہر میں گھو مائیں گے۔ نیب میمو دیکھائیں کیا کیا ملزم کو لے جاکر۔ عدالت آرڈر میں لکھے کہ نیب نے میمو جمع نہیں کرایا۔ جو نیب کراچی میں سلوک کررہی وہ ملک میں کہیں نہیں۔ ڈاکٹر عاصم کو انہی کے اسپتال میں ہتھکڑیوں کے ساتھ گھومایا۔ شرجیل کے ساتھ ہائیکورٹ میں کیا ہوا سب نے دیکھا۔ عامر نقوی نے کہا کہ نیب نے مزاق بنایا ہوا ہے۔ نشاندہی پر گرفتار کئے گیئے افراد سے کیا تفتیش کی عدالت پوچھے۔ کچھ نہیں پوچھتے، صرف بٹھا کر رکھتے ہیں۔ عامر نقوی نے کہا کہ سندھ میں نیب ہھتکڑیاں لگا کر ان ہی کے دفاتر میں گھمایا جاتا ہے ایسا صرف یہاں ہورہا ہے۔ پنجاب میں کسی کو ایسے گرفتار نہیں کیا جاتا۔ اس دھرے معییار پر ہائیکورٹ نے بھی تشویش کا اظہار کیا ہے۔ تفتیشی افسر نے بتایا کہ ناصر عباس نے نشاندہی کی تھی۔ لے جانے کا مقصد ملزم کی تذلیل نہیں تھا۔ ملزم کی نشاندہی پر ڈائریکٹر چارج پارکنگ عبید کی گرفتاری ہوئی۔ کے ڈی اے کے افسران کو خط لکھے گئے لیکن کوئی جواب نہیں آیا۔ عدالت نے فریقین کا موقف سننے کے بعد ملزم ناصر عباس کے ریمانڈ میں 14 نومبر تک توسیع کردی۔
ریمانڈ توسیع