پاکستان آزادی ریلی کا احوال

07 نومبر 2017

پاک فوج کے زیر اہتمام پاکستان آزادی ریلی جوخنجراب سے شروع ہوکریہ پاکستان موٹر ریلی ڈیرہ اسماعیل خان سے ژوب ،کوئٹہ سے ہوتی ہوئی گوادر تک اپنا سفر جاری رکھا۔آزادی ریلی کے انعقاد سے دنیا بھر کو پاکستان کی جانب سے امن کا پیغام گیا ہے ،اس ریلی میں درجنوںگاڑیاں او رموٹر سائیکلیں شامل تھیں۔کوئٹہ میں پاکستان آزادی ریلی کا استقبال پاک فوج کے افسران اور صوبائی حکومت کے حکام نے کیا۔ ریلی کے شرکاء کے حوالے سے کوئٹہ میںایک پروقار تقریب کا انعقاد بھی کیا گیا۔بعدازاں گوادر تک سفر کرنے والی یہ ریلی کوئٹہ سے گوادر کیلئے روانہ ہو ئی۔ ریلی کا مقصدپرامن اور خوشحال پاکستان کا پیغام اجاگرکرنا تھا۔گوادر میں ریلی کے پہنچنے کے بعد وہاں ایک تقریب کا اہتمام کیا گیا۔کاروں اور موٹرسائیکلوں پر مشتمل ریلی کی اختتامی تقریب سے آرمی چیف جنرل قمر جاوید باوجوہ نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ آنے والے سال میں بلوچستان بھر میں ترقیاتی کام کا جال بچھایا جائے گا، خاص کر صوبے میں اسکولوں، سڑکوں اور ہسپتالوں کی تعمیرہو گی۔بلوچستان میں ریلیوں کا انعقاد کرکے عوام کے دل جیت لیں گے۔تقریب میں عوام کا جوش وجذبہ دیکھ کر خوشی ہوئی ہے۔تقریب سے خطاب کرتے ہوئے وزیراعلیٰ بلوچستان نواب ثناء اللہ خان زہری نے کہا کہ پاکستان موٹر ریلی درحقیقت امن اور ترقی کے سفر کی امین اور قومی یکجہتی کے فروغ کی بنیاد ثابت ہوئی ہے، ریلی کے انعقاد سے خواب سے حقیقت کی جانب گامزن چین پاکستان اقتصادی راہداری کی اہمیت بھی اجاگر ہوئی ہے۔ کمانڈر سدرن کمانڈ لیفٹیننٹ جنرل

عاصم سلیم باوجوہ نے اپنے خیالات کے اظہار میں کہا کہ پاکستان آزادی ریلی امن اور خوشحالی کا پیغام ہے۔ گوادر کے لوگ بڑے مہمان نواز ہیں، ریلی کے انعقاد پر منتظمین بھی خراج تحسین کے لائق ہیں کہ ان کی شب وروز محنت سے گوادر میںتقریب منعقد اوریہاں کے لوگوں کو خوشی کا سامان میسر ہوا، اس سے تفریح کے مواقع بھی پیدا ہوئے۔ پاکستانی قوم ایک امن پسند اورکھیلوں سے محبت کرنے والی ہے۔ سی پیک کے حوالے سے ان کا کہناتھا کہ یہ منصوبہ پاکستان کو ترقی کی جانب لے جائے گا۔ اس سے بلوچستان کی ترقی ہوگی اور بلوچستان کی ترقی ہی پاکستان کی ترقی ہے۔ دوسری جانب خنجراب سے گوادر تک جگہ جگہ عوام نے ریلی کے شرکاء کو خوش آمدید کہا اور ریلی سے اپنے دلی لگاؤ کااظہار کیا۔ادھرحکومت کی کوشش ہے کہ سرمایہ کاروں کے لئے گوادر کو پرکشش بنایا جائے۔ گوادر کی ترقی کے عمل میں بھرپور شرکت اور سی پیک کو ترقی وخوشحالی کے لئے عمل میں لایا جارہا ہے، جس کے فوائدآنے والے وقتوں میں نظر آئیں گے ‘سی پیک کے توسط سے پاکستان دنیا کیلئے تجارتی رابطوں کا مرکز بنے گا۔ اسی طرح یہ منصوبہ نہ صرف بلوچستا ن بلکہ پورے خطے کے لئے معاشی اور تجارتی ضروریات کا سامان ثابت ہو گا۔ لہٰذا پاک فوج کے زیر اہتمام تاریخی بڑی طویل موٹر ریلی کا کامیاب انعقاد ایک پرامن اقدام ہے اور اقتصادی راہداری کی کامیابی کی ضمانت ہے۔ ریلی کے انعقاد سے دنیا بھر کو پاکستان کی جانب سے امن کا پیغام گیا ہے، پاکستانی قوم نے جرات اور بہادری کے ساتھ ملک میں ہونے والی دہشت گردی کا مقابلہ کیا ہے۔ اس حوالے سے پاک فوج اورسیکورٹی فورسز نے بھی اپنی جانوں کے نذرانے دیئے ہیں۔ملک بھر سے دہشت گردوں کی کمر توڑ دی گئی ہے،اوراب حکومت کی کوششوں اور عوام کے تعاون سے ملک ترقی کی جانب گامزن ہے۔