کراچی میں خونریزی نہ رکی، کانسٹیبل سمیت 10 افراد گولیوں سے چھلنی

07 جولائی 2013

کراچی (نوائے وقت نیوز+ ایجنسیاں) کراچی میں فائرنگ، بدامنی کے واقعات میں پولیس اہلکار اور رضاکار سمیت مزید 10 افراد ہلاک ہوگئے۔ لانڈھی کے علاقے لالہ آباد میں ایک شخص سیفل نے خاتون اور مرد کو فائرنگ کرکے قتل کر دیا۔ مقتولین کی شناخت 24 سالہ دلنواز اور محمد عمران کے نام سے کی گئی ہے۔ ادھر لسبیلہ پل کے قریب سے ایک شخص کی تشدد زدہ لاش برآمد ہوئی۔ مقتول کی شناخت نہیں ہو سکی۔ ادھر نئی سبزی منڈی میں نامعلوم افراد نے 2 تاجروں کو فائرنگ کرکے ہلاک کر دیا۔ واقعہ کے بعد سبزی منڈی میں کاروبار بند ہو گیا اور علاقے میں بھگدڑ مچ گئی۔ صدر کے علاقے پارکنگ پلازہ کے قریب نامعلوم افراد کی فئارنگ سے پولیس اہلکار محمد رفیق جاں بحق ہوگیا۔ کورنگی انڈسٹریل ایریا میں دہشت گردوں کی فائرنگ سے 35 سالہ نصراللہ جامع مسجد نور کا پیش امام جاں بحق ہو گیا۔ ادھرگزشتہ روز ناظم آناد میں نامعلوم افراد کی فائرنگ سے ہلاک ہونیوالے کی شناخت محمد رفیق کے نام سے ہوئی جو ایم کیو ایم کے یونٹ 112A بلدیہ ٹاﺅن کا سابقہ کمیٹی ممبر تھا۔ ادھر لیاری میں پولیس کی تعیناتی کے بعد کئی روز سے جاری کشیدگی کے بعد صورتحال بہتر ہونا شروع ہوگئی۔ ہفتہ کو حالات بہتر ہونے پر آئی سی آئی پل پر ٹریفک کی آمدورفت جاری تھی۔ ہفتہ کی صبح سے ہی لیاری، ماڑی پور، آگرہ تاج اور دیگر علاقوں میں پولیس کی بھاری نفری تعینات رہی اور عارضی چوکیاں بھی قائم کردی گئی ہیں جس کی وجہ سے علاقے کی کشدہ صورتحال پر فی الحال قابو پالیا گیا ہے۔ آہستہ آہستہ کاروباری سرگرمیاں بھی بحال ہونا شروع ہوگئی۔ دریں اثناءقصبہ موڑ کے قریب فائرنگ سے ایک پولیس رضاکار جاں بحق ہو گیا۔ اورنگی ٹاﺅن میں پولیس سے فائرنگ کے تبادلے میں بھتہ خور سیف اللہ ہلاک جبکہ اسکا ساتھی زخمی حالت میں گرفتار کر لیا گیا۔