ایوان قائداعظم کے دفتر کا افتتاح تاریخ ساز لمحہ ہے‘ پاکستان تا قیامت قائم رہے گا : ڈاکٹر مجید نظامی

07 جولائی 2013

لاہور (فرخ سعید خواجہ) ایوان قائداعظمؒ کے دفتر کا افتتاح ایک تاریخ سازلمحہ ہے۔ ہم نے اپنا کام کر دیا ہے۔ انشاءاللہ تعالیٰ پاکستان قیامت تک قائم رہے گا اور یہ ایوان قائداعظمؒ بھی اس وقت تک قائم رہے گا اور افکار قائداعظمؒ کی ترویج کرتا رہے گا۔ اللہ تعالیٰ سے دعاکریں کہ وہ ہمیں معاف کر دے، قوم کو اجتماعی توبہ کا دن منانا چاہئے اور ساری قوم صدق دل سے اللہ تعالیٰ کے حضور توبہ و استغفار کرے۔ ان خیالات کا اظہار تحریک پاکستان کے سرگرم کارکن، ممتاز صحافی اور نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے چیئرمین جناب ڈاکٹر مجید نظامی نے 20-J/1، جوہر ٹاﺅن لاہور میں قائداعظم محمد علی جناحؒ کے نام سے منسوب قومی اہمیت کے حامل عظیم الشان تعمیراتی منصوبے ”ایوان قائداعظمؒ“ کے دفتر کے افتتاح کے موقع پر منعقدہ پروقار تقریب میں اپنے صدارتی خطاب کے دوران کیا۔ یہ ایوان نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے زیر اہتمام تعمیر کیا جا رہا ہے۔ اس موقع پر نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے وائس چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد، تحریک پاکستان ورکرز ٹرسٹ کے چیئرمین کرنل (ر) جمشید احمد ترین، سابق چیف جسٹس وفاقی شرعی عدالت جسٹس (ر) میاں محبوب احمد، ایس ایم ظفر، چیف کوآرڈینیٹر نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ میاں فاروق الطاف، نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے قانونی مشیر جسٹس (ر) منیر احمد مغل، چودھری نعیم حسین چٹھہ، بیگم مہناز رفیع، بیگم صفیہ اسحاق، ممبر صوبائی اسمبلی رانا محمد ارشد، مظہرالدین انصاری، کاشف اسلم، کرنل (ر) اکرام اللہ، پروفیسر ڈاکٹر ایم اے صوفی، سید نصیب اللہ گردیزی، پروفیسر شفیق جالندھری، پیر اعجاز ہاشمی، خواجہ محمود احمد ایڈووکیٹ، مولانا محمد شفیع جوش، انجینئر طفیل ملک، ڈاکٹر یعقوب ضیائ، منظور حسین خان، چودھری محمد حسین گجر، محمد یٰسین وٹو، عزیز ظفر آزاد، رانا اکرام، شہزاد خان، شفیق رضا قادری، بیگم فوزیہ چیمہ، ایوب وارثی، نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ و تحریک پاکستان ورکرز ٹرسٹ کے عہدیداران و کارکنان سمیت مختلف شعبہ ہائے زندگی سے تعلق رکھنے والے خواتین وحضرات کثیر تعداد میں موجود تھے۔ قبل ازیں جناب ڈاکٹر مجید نظامی نے کارکنان تحریک پاکستان کے ہمراہ ربن کاٹ کر نئے دفتر کا افتتاح اور افتتاحی تختی کی نقاب کشائی کی، اس موقع پر علامہ احمد علی قصوری نے دعا ئے خیر کی۔ پروگرام کا باقاعدہ آغاز تلاوت کلام پاک، نعت رسول مقبول اور قومی ترانہ سے ہوا۔ حافظ محمد عمر اشرف نے تلاوت کلام پاک کی سعادت حاصل کی جبکہ معروف نعت خواں سرور حسین نقشبندی نے بارگاہ رسالت مآب میں ہدیہ¿ عقیدت پیش کیا۔ پروگرام کی نظامت کے فرائض نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے سیکرٹری شاہد رشید نے انجام دئیے۔ جناب ڈاکٹر مجید نظامی نے کہا کہ ایوان اقبالؒ کی تعمیر کے بعد مجھے اس بات پر شرمندگی محسوس ہوتی تھی کہ جنہوں نے نظریہ دیا ان کے نام پر تو ایوان موجود ہے لیکن جس عظیم قائد نے ہمیں یہ ملک لے کر دیا اس کے نام پرکراچی سے لے کر پشاور تک کوئی یادگار موجود نہیں ہے لہٰذا ہم نے ایوان قائداعظمؒ کی تعمیر کا فیصلہ کیا اور اس ایوان کی تعمیر کیلئے لاہور سے بہترکوئی جگہ نہیں تھی۔ انہوں نے کہا اللہ تعالیٰ کا شکر ہے کہ ہمیں ہندو اور انگریزکی غلامی سے آزادی حاصل ہوئی۔ بدقسمتی سے ہم نے ایک کے دو پاکستان بنا دئیے۔ آج کراچی مقتل گاہ بنا ہوا ہے جبکہ کوئٹہ اور فاٹا میں بھی روزانہ دھماکے ہو رہے ہیں۔ اللہ تعالیٰ سے دعا کریں کہ وہ ہمیں معاف کر دے، میں مسلسل یہ کہتا رہتا ہوں کہ قوم کو اجتماعی توبہ کا دن منانا چاہئے اور اس دن ساری قوم صدق دل سے اللہ تعالیٰ کے حضور توبہ و استغفار کرے۔ اب ہمیں یہ عہدکرنا چاہئے کہ ہم پاکستان کو قائداعظمؒ اور علامہ محمد اقبالؒ کے نظریات و تصورات کے عین مطابق چلائیں گے۔ انہوں نے کہا ہمارے حکمران بھارت کے ساتھ دوستی کیلئے بیتاب دکھائی دیتے ہیں میری اللہ تعالیٰ سے دعاہے کہ وہ انہیں عقل سلیم عطا فرمائے اور صحیح معنوں میں پاکستانی بنائے۔ ہم نے اپنی ٹیم کے ساتھ یہ ادارہ بنا دیا ہے۔ انہوں نے کہا ایوان قائداعظمؒ کا سنگ بنیاد رکھے جانے کی تقریب میں اُ س وقت کے وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے وفاقی حکومت کی جانب سے ایوان کی تعمیر کیلئے 5 کروڑ روپے دینے کا اعلان کیا تھا لیکن ابھی تک یہ رقم ہمیں نہیں ملی، میں نے اس سلسلے میں صدر آصف علی زرداری سے بھی بات کی ہے۔ میرا حکومت سے مطالبہ ہے کہ وہ یہ فنڈز فوری ریلیز کرے۔ نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے وائس چیئرمین پروفیسر ڈاکٹر رفیق احمد نے کہا ہماری خواہش ہے کہ یہ ایوان ایک لمحہ ضائع کئے بغیر جلد آپریشنل ہو جائے۔ اس موقع پر ایوان قائداعظمؒ کے چیف کنسلٹنٹ کاشف اسلم نے ایوان قائداعظمؒ کے تعمیراتی کام کے حوالے سے ہونیوالی پیشرفت سے حاضرین کو آگاہ کیا۔ قبل ازیں نظریہ¿ پاکستان ٹرسٹ کے سیکرٹری شاہد رشید نے شرکا کا خیرمقدم کرتے ہوئے انہیں خوش آمدید کہا۔ اس موقع پر رانا محمد ارشد اور چودھری محمد حسین گجر نے ایوان قائداعظمؒ کی تعمیر کیلئے جناب ڈاکٹر مجید نظامی کو ایک ایک لاکھ روپے کا چیک پیش کیا جبکہ بیگم صفیہ اسحاق نے بھی ایک لاکھ روپے فنڈ کا اعلان کیا۔ پروگرام کے آخر میں جسٹس (ر) منیر احمد مغل نے دعا کرائی۔
ڈاکٹر مجید نظامی