پٹیل پاڑہ میں 2افراد کے قتل کا مقدمہ سابق سینیٹر فیصل رضا عابدی گرفتار

06 نومبر 2016

کراچی (نمائندہ نوائے وقت) پیپلز پارٹی کے سابق رہنما اور سینیٹر فیصل رضا عابدی کو گزشتہ روز پٹیل پاڑہ میں 2افراد کے قتل کے مقدمے میں پولیس نے باقاعدہ گرفتار کرلیا ہے۔ڈی آئی جی ایسٹ کے مطابق گرفتاری گزشتہ روز پٹیل پاڑہ میں 2 افراد کے قتل کے مقدمے میں کی گئی ہے جو جمشید کوارٹرز تھانے میں درج کیا گیا ہے۔فیصل رضا عابدی کوجمعہ اور ہفتہ کی درمیانی قانون نافذ کرنے والے اداروں نے ان کے گھر سے حراست میں لیا تھا۔ فیصل رضا عابدی کی گرفتار ی پر مجلس وحدت مسلمین نے اپنے ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ فیصل رضا عابدی کو گرفتار کرکے سندھ حکومت نے ایک غلط روایت کی بنیاد ڈالی ہے۔ ڈی آئی جی ایسٹ نے کہا ہے کہ سابق سینیٹر فیصل رضا عابدی کو دوہرے قتل کے الزام میں انٹیلی جنس رپورٹ کی بنیاد پر گرفتار کیا گیا ہے۔ دونوں افراد کو گزشتہ روز پٹیل پاڑہ میں قتل کیا گیا تھا۔ ڈی آئی جی ایسٹ نے کہا کہ فیصل رضا عابدی کے موبائل فونز اور لیپ ٹاپ کا ڈیٹا حاصل کیا جارہا ہے اور انہیں انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا جائے گاجہاں پولیس اے ٹی سی کے منتظم جج کے روبرو ان کے ریمانڈ کی استدعا کریگی ۔ ایس پی جمشید زون کے مطابق رات گئے ان کے گھر سے ملنے والے اسلحے کی جانچ پڑتال کا عمل شروع کردیا گیا ہے جس کے بعد میڈیا کو مزید تفصیلات سے آگاہ کیا جائے گا۔فیصل رضا عابدی کوجمعہ اور ہفتہ کی درمیانی شب نیو رضویہ سوسائٹی میں واقع ان کے گھر سے قانون نافذ کرنے والے اداروں نے حراست میں لے کر نامعلوم مقام پر منتقل کردیا تھا جہاں ان سے تفتیش جاری تھی۔فیصل عابدی کے گھر سے ممنوعہ بور کا جو اسلحہ برآمد کیا گیا جن میں جی تھری اور ایس ایم جی سمیت دیگر ہتھیار شامل تھے، ان سے متعلق بھی تحقیقات کی جارہی ہیں۔ رضویہ سوسائٹی میں فیصل رضا عابدی کے گھر پر چھاپہ کے دوران قانون نافذ کرنے والے اداروں کے اہلکار تقریبا آدھے گھنٹے تک ان کے گھر کی تلاشی لیتے رہے اس دوران اطراف کی سڑکیں بند کر کے گھر کو حصار میں لیا گیا تھا جبکہ سیکورٹی ادارے کی 10 گاڑیوں نے کارروائی میں حصہ لیاتھا۔مجلس وحدت مسلمین پاکستان کے مرکزی سیکرٹری جنرل علامہ راجہ ناصر عباس جعفری نے فیصل رضا عابدی کی گرفتاری پر شدید ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ ایک طرف ہمیں دہشت گردی کا نشانہ بنایا جا رہا ہے ،دوسری طرف ہمارے علما و عمائدین کی گرفتاری جیسے بلاجواز اقدامات کا سامنا ہے۔انہوں نے وزیر اعظم نوازشرےف، چیف جسٹس اوروزیراعلیٰ سندھ سے مطالبہ کیا ہے کہ ان غیر قانونی اقدامات کا نوٹس لیا جائے اور فیصل رضا عابدی کو فوری رہا کیا جائے۔مجلس وحدت مسلمین پاکستان کراچی کے تحت سابق سینیٹراوروائس آف شہدا کے چیئرمین سید فیصل رضا عابدی کی گرفتاری پر شاہراہ پاکستان، نیشنل ہائی وے ملیر سمیت کئی علاقوں میں احتجاجی ریلیاں نکالی گئیں۔ احتجاجی ریلیوں سے ایم ڈبلیو ایم کے مرکزی ڈپٹی سیکریٹری جنرل علامہ احمد اقبال رضوی، صوبائی رہنما علی حسین نقوی، علامہ علی انور جعفری، علامہ مبشر حسن، علامہ صادق جعفری، علامہ احسان دانش، علامہ نشان حیدر ساجدی، علامہ ایوب صابری، علامہ حامد مشہدی، علامہ غلام محمد فاضلی، احسن رضوی نے خطاب کیا۔ انہوں نے کہا کہ فیصل رضا عابدی کی شرمناک انداز سے کی گئی گرفتاری افسوسناک و قابل مذمت ہے‘ فیصل عابدی کو سیاسی انتقام کا نشانہ بنایا گیا ہے کالعدم تنظیموں اورانکے سرپرست سندھ حکومت کے تحفظ میں آزاد گھوم رہے ہیں۔ انہوں نے فیصل رضا عابدی کی فوری رہائی کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ اگر رہائی عمل میں نہیں لائی گئی تو وزیر اعلیٰ ہاو¿س کا گھیرو¿ کیا جائے گا۔
فیصل رضا عابدی/ گرفتار