کرپشن کیخلاف کراچی سے سے چترال تک انقلاب مارچ کرینگے: سراج الحق

06 مارچ 2017

بنوں(نامہ نگار)جماعت اسلامی کے مرکزی امیر سینیٹر سراج الحق نے کہا ہے کہ ملک پر لیڈر نہیں بلکہ ڈیلر وں کا قبضہ ہے جماعت اسلامی لیڈروں کے لبادے میں چھپے ڈیلروں سے نجات دلائے گی، پاکستان کی آزادی سے لیکر آج تک سیاستدان کے نام اور جھنڈے مختلف ہیں مگر ان کا ایجنڈا ایک ہے ان کے کرتوتوں نے ہم سے مشرقی پاکستان جد ا کیا ہمارے ملک کو خطرہ اور سرحدات غیر محفوظ ہیں، خدشہ ہے کل کوئی دوسرا مشرقی پاکستان نہ بن جائے ہمارے ملک کو پرویز مشرف نے امریکہ کا غلام بنایا اور وہی پالیسی وزیر اعظم میاں نواز شریف نے اپنائی ہمارا ملک قیمتی معدنیات اور سونے سے بھرا پڑا ہے تو کارخانے کیوں نہیں لگائے جاتے نوجوان با صلاحیت ہیں تو روز گار کے مواقع کیو ں نہیں دیئے جاتے آج ہمارے بچے گندگی کے ڈھیر میں رزق تلاش کر رہے ہیں ہمیں کیوں مقروض بنایا گیا کیوں قوم کی دولت بیرون ملک منتقل کی جا رہی ہے ہمارے حکمرانوں نے قوم کا پیسہ بیرون ملک منتقل کرکے بڑے بڑے علی شاہ بنگلے تعمیر کئے بنک اکاو¿نٹس کھولے ہم نے اس وجہ پر کرپشن کے خلاف جدوجہد شروع کی جو انجام تک جاری رہے گی ، وہ سپورٹس کمپلیکس بنوں میں شمولیتی جلسہ عام سے خطاب کررہے تھے ، تقریب سے صوبائی امیر مشتاق احمد خان، سابق سینیٹر پروفیسر محمد ابراہیم خان ،سابق ممبر صوبائی اسمبلی انتخاب خان چمکنی ،ضلعی امیر ڈاکٹر ناصر خان ،جنرل سیکرٹری اختر علی شاہ ،انعام الحق و دیگر نے بھی خطاب کیا ،اس موقع پر درجنوںافراد نے اپنے خاندان اور ساتھیوں سمیت جماعت اسلامی میں شمولیت اختیار کر لی، سراج الحق نے حفظ مکمل کرنے والے طلباءکو پگڑیاں بھی پہنائیں۔اس موقع پر خطاب کرتے ہوئے سراج الحق نے کہا کہ آج ہم نے سپریم کورٹ میں درخواست اس لئے دائر کی کہ پانامہ لیکس میں کوئی غریب،مزدور ،محنت کش اور چوکیدار کا نام شامل نہیں بلکہ وزیر اعظم نوازشریف گھر والوں سمیت اور ان کے وزراءشامل ہیں، سپریم کورٹ حق پر مبنی فیصلہ سنائے گی ،کرپشن کے خلاف ٹرین مارچ کرایا اوراب کراچی سے چترال تک انقلاب مارچ کی تیاری کر رہے ہیں ۔اُنہوں نے کہا کہ حکمرانوں کی غلط پالیسی کی وجہ سے آج ہرشہری اپنے آپ کو غیر محفوظ تصور کرتے ہیں ایک وقت تھا کہ وانا سے لیکر افغان سرحد تک غیر ملکی خاتون بلا خوف سفر کیا کرتی تھی پاک افغان سرحد پر کوئی سکیورٹی تعینات نہ تھی آج سارے راستے چوکیوں کی شکل اختیار کر گئے ہیں، سراج الحق نے کہا کہ یہ ملک ان حکمرانوں نے تباہ کیا جس کا ایک بھائی دوسری پارٹی میں دوسرا بھائی تیسری پارٹی میں جو عوام سے مختلف ناموں پر ووٹ لے رہے ہیں اور جب اقتدار تک پہنچ جائے تو قوم کا سودا کرلیتے ہیں یہ قوم کیسے ترقی کرے گی جس قوم کی مائیں ،بہنوں کا سودا کیا جا تا ہے ڈاکٹر عافیہ صدیقی کو پرویز مشرف نے امریکہ پر فروخت کرایا اُنہوں نے کہا کہ ہماری قوم بجلی ،گیس ،تعلیم ،روز گار مانگ رہی ہے ،حکمرانوں کے بچے بیرون ملک تعلیم حاصل کر رہے ہیں ،بیرون ملک علاج کرتے ہیں مگر غریب کیلئے اپنے ہی ملک میں ڈاکٹر تک میسر نہیں،اُنہوں نے کہا کہ جماعت اسلامی ایک ایسی عدالت کا قیام چاہتی ہے جہاں انصاف کیلئے ہر غریب کو رسائی حاصل ہو،مقررین نے کہا کہ جنوبی اضلاع قیمتی معدنیات سے بھری پڑی ہیں مگر افسوس کہ ہماری بیٹیاں اور مائیں پینے کا پانی دور دور سے سروں پر لاتی ہیں اور ان کیلئے پانی تک میسر نہیں ان کا کہنا تھا کہ علامہ اقبال اور قائد اعظم کے پاکستان پر آج ڈیلر مسلط ہیں ہم خلافت راشدہ کا قانون چاہتے ہیں وہ نظام جہاں ملک غلام نہ ہوں، عوام اور حکمران ایک ہی صف میں کھڑے ہوں بچوں کے ہاتھوں میں قلم ہوں ،ملک نیب کا مقروض نہ ہوں ،دہشت گردی اور اغواءبرائے تاوان ،ڈرون حملے نہ ہوں اور حقیقی معنوں میں قائد اعظم کا پاکستان ہوں مگر افسوس کہ ہمارے حکمرانوں نے ملک کا جغرافیہ ہی تبدیل کر دیا ہے اور پاکستان کے سبز پاسپورٹ کو دنیا شک کی نظر سے دیکھتی ہے مقررین نے کہ فاٹا کو خیبر پختون خوا میں ضم کرانے کے اعلان کے بعد اب وہاں پر تعلیم ،روز گار ،میگا پراجیکٹس کیلئے بھی جدو جہد جاری رہے گی اُنہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ متاثرین شمالی وزیرستان کو جلد جلد اپنے گھروں کو واپس کیا جائے ۔