ایف بی آر کے اقدامات سے دولت کی غیر منصفانہ تقسیم میں اضافہ ہوگا: اکانومی واچ

06 مارچ 2017

لاہور(نیوزرپورٹر)پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے کہ ایف بی آر کی جانب سے کاروباری برادری کو ہراساں کرنے کے واقعات کو نوٹس لیا جائے۔ محاصل میں کمی کے ذمہ دار عوام نہیں اشرافیہ ہیں اسلئے انھیں ہدف بنایا جائے۔ تیل کی قیمت میں مسلسل اضافہ عوام کو نچوڑنے کے مترادف ہے۔ حکومت بجٹ خسارہ پورا کرنے کے لئے منی بجٹ لانے کی تیاری کر رہی ہے۔ پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل اور سینئر نائب صدر کاشف اقبال گوندل نے یہان جاری ہونے والے ایک مشترکہ بیان میں کہا کہ پٹرول کی قیمت میں مسلسل اضافہ اور متوقع منی بجٹ ملکی معیشت کی بنیادیں ہلا دے گا اور اس کے سنگین نتائج نکلیں گے۔احکومت کا انحصار بالواسطہ ٹیکسوں پر مزید بڑھ رہا ہے جبکہ ایف بی آر کے حالیہ اقدامات سے دولت کی غیر منصفانہ تقسیم میں اضافہ ہو گا ۔ پاکستان میں ستر فیصد سے زیادہ محاصل بالواسطہ ٹیکس کے زریعے جبکہ صرف تیس فیصدسے کم ڈائریکٹ ٹیکس کے زریعے وصول کئے جا رہے ہیں جس نے سماجی و معاشی تفاوت کو نئی بلندیوں تک پہنچا دیا ہے۔ٹیکس کا دبائو عوام پر بڑھتا جا رہا ہے جبکہ اشرافیہ جو ملکی وسائل سے جونک کی طرح چمٹے ہوئے ہیں کو ہر سہولت دی جا رہی ہے۔