پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے اجلاس آج شروع ہونگے، فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کا ترمیمی بل پیش ہونے کا امکان، سینٹ میں اپوزیشن جماعتوں کے قائدین کا اجلاس بھی طلب

06 مارچ 2017

اسلام آباد (وقائع نگار خصوصی) پارلیمنٹ کے دونوں ایوانوں کے اجلاس (آج) پیر کو شروع ہونگے‘ جس میں فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع سے متعلق آئینی ترمیمی بل پیش ہونے کا امکان ہے، قومی اسمبلی کا 40واں سیشن سپیکر سردار ایاز صادق کی صدارت میں چار بجے شام شروع ہوگا قومی اسمبلی کے اجلاس سے قبل سیشن کے ایجنڈے پر مشاورت کرنے کے لئے ہائوس بزنس ایڈوائزری کمیٹی کا اجلاس ہوگا۔ سینٹ کا اجلاس آج سہ پہر تین بجے چیئرمین میاں رضا ربانی کی صدارت میں ہو گا‘ سینٹ میں بعض مغربی ممالک میں مساجد پر حملوں کے خلاف قرارداد مذمت بھی پیش کی جائے گی اور حکومت سے ان حملوں کو اقوام متحدہ اور او آئی سی سمیت دیگر عالمی فورمز پر اٹھانے کا مطالبہ کیا جائے گا۔ احتساب آرڈیننس میں ترمیم کے لئے مجلس قائمہ برائے قانون و انصاف کی رپورٹ بھی پیش ہوگی۔ دوران سیشن فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کا بل پیش ہوگا سینیٹ کے اجلاس کا 56نکات پر مشتمل ایجنڈا جاری کیا گیا ہے۔ پنجاب میں پختونوں کے خلاف کارروائی‘ فاٹا ‘ بلوچستان اور دیگر شہروں میں بڑی تعداد میں لوگوں کے شناختی کارڈز بلاک کرنے کے معاملے پر حکومت سے جواب طلب کیا گیا ہے اور ان معاملات پر ایجنڈے میں شامل کردیا گیا ہے۔ سینٹ میں متحدہ حزب اختلاف کی جماعتوں کے قائدین کا اجلاس آج (پیر) تین بجے سہ پہر پارلیمنٹ ہائوس میں طلب کرلیا گیا ہے جس میں فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع کے معاملے پر مشترکہ حکمت عملی تیار کی جائے گی۔ اجلاس کی صدارت قائد حزب اختلاف چوہدری اعتزاز احسن کریں گے اجلاس میں پیپلزپارٹی، تحریک انصاف، عوامی نیشنل پارٹی، ایم کیو ایم اور قوم پرست جماعتوں کے ارکان سینیٹ شریک ہوں گے۔ سینیٹ میں حزب اختلاف کی پارلیمانی جماعتوں کے اس اجلاس میں فوجی عدالتوں کی مدت میں توسیع سے متعلق آئینی ترمیم کے بل کا جائزہ لیا جائے گا۔