شمالی کوریا‘ ہائیڈروجن بم کا تجربہ‘ امریکہ نے ایٹمی حملہ کی دھمکی دیدی

05 ستمبر 2017

پیانگ یانگ، واشنگٹن ،اسلام آباد ،نیو یارک (اسٹاف رپورٹر+نیوزایجنسیاں) برطانوی میڈیا نے دعویٰ کیا ہے کہ شمالی کوریا نے ہائیڈروجن بم کا تجربہ کرلیا ہے جو ایٹم بم سے کئی گنا زیادہ طاقتور ہے جبکہ امریکہ نے اشتعال انگیزیوں پر شمالی کوریا کو ایٹمی حملے کی دھمکی دی ہے۔غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق شمالی کوریا نے چھٹا ایٹمی دھماکہ کیا ہے اور جدید ترین ہائیڈروجن بم تیا کیا ہے جو بین البراعظمی بیلسٹک میزائل پر رکھ کر لانچ کیا جاسکتا ہے۔ چاپان حکومت نے بھی نئے جوہری تجربے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا ہے کہ شمالی کوریا نے گذشتہ روز ایک نیا جوہری تجربہ کیا جس کی وجہ سے زیر زمین وسیع پیمانے پر زلزلے کا جھٹکا 6.3 شدت محسوس کیا گیا۔ اس سے قبل شمالی کوریا کے سرکاری میڈیا پر کم جونگ کی تصویر بھی جاری ہوئی تھی جس میں وہ ایک نئے قسم کے ہائیڈروجن بم کا معائنہ کر رہے ہیں۔ علاوہ ازیں شمالی کوریا کے چھٹے جوہری تجربات کے جواب میں جنوبی کوریا نے میزائل کی ایک مشق کی ہے جو کہ شمالی کوریائی جوہری تنصیبات پر حملے کے مشابہ ہے۔ اصلی ہتھیاروں سے کی جانے والی مشق میں راکٹوں کو فائٹر طیاروں سے چھوڑے جاتے اور زمین سے بیلسٹک میزائل داغے جاتے دیکھا گیا۔ یہ مشق امریکی وزیر دفاع جیمز میٹس نے پیانگ یانگ کو کہا ہے کہ اگر امریکہ یا اس کے اتحادی کو کوئی خطرہ پیش آیا تو اس کا جواب بھرپور فوجی قوت سے دیا جائے گا۔ شمالی کوریا کا کہنا ہے کہ اس نے اتوار کو جوہری ہتھیار کا کامیاب تجربہ کیا جو دور تک مار کرنے والے میزائل پر نصب کیا جا سکتا ہے۔ ہائیڈروجن بم کے کامیاب تجربے پر سوشل میڈیا پر اپنے رد عمل کا اظہار کرتے ہوئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا کے الفاظ اور عمل دونوں ہی امریکہ کے لئے انتہائی خطرناک ہوتے جا رہے ہیں۔ ٹرمپ نے کہا کہ شمالی کوریا ایک نسل پرست، باغی ملک ہے جو چین کے لئے بڑا خطرہ اور شرمندگی کا باعث ہے۔ چین شمالی کوریا کی مدد کرنے کی کوشش کر رہا ہے لیکن اب تک اس میں بہت ہی کم کامیابی حاصل کر سکا ہے۔ چین، جاپان، جنوبی کوریا اور امریکہ نے شدید تشویش کا اظہار کیا ہے۔ پاکستان نے بھی شمالی کوریا کی جانب سے ہائیڈروجن بم کے تجربے کی مذمت کی ہے۔ ترجمان دفتر خارجہ نے کہا ہے کہ شمالی کوریا اقوام متحدہ کی سکیورٹی کونسل کی قراردادوں پر عمل اور جوہری ہتھیاروں کی دوڑ میں فعال ہونے سے اجتناب کرے، ترجمان نے کہا کہ پاکستان تمام فریقین پر زور دیتا ہے کہ وہ زیادہ سے زیادہ صبر کا مظاہرہ کریں اور مذاکرات کے ذریعے مسئلے کا پرامن حل تلاش کریں۔ سلامتی کونسل کے ہنگامی اجلاس میں امریکہ نے پیانگ یانگ کو سزا دینے کے لئے مضبوط اقدامات کا مطالبہ کیا۔ چین نیمذاکرات پر زور دیا ہے اور کہا اقوام متحدہ شمالی کوریا کیخلاف سخت اقدامات کرے۔ چین نے مذاکرات پر زور دیا ہے۔ جنوبی کوریا نے کہا ہے کہ اسے ایسے اشارے ملے ہیں کہ جو ظاہر کرتے ہیں کہ شمالی کوریا ایک اور بین البراعظمی میزائل کا تجربہ کرنے کی تیاری کر رہا ہے۔ جنوبی کوریا کے صدارتی محل کے ترجمان نے کہا ہے کہ اس اجلاس سے قبل جاپان اور جنوبی کوریا کے رہنما اس بات پر متفق ہیں کہ وہ شمالی کوریا کے خلاف مزید سخت پابندیاں لانے کی کوشش کریں گے۔ جیمز میٹس کا یہ بیان امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کو نیشنل سکیورٹی بریفنگ کے بعد سامنے آیا ہے شمالی کوریا نے اتوار کو جوہری تجربہ کیا جو دور تک مار کرنے والے میزائل پر نصب کیا جا سکتا ہے۔ پیانگ یانگ کا کہنا ہے کہ اس نے ایک ایسے ہائیڈروجن بم کا تجربہ کیا ہے جو ایک ایٹمی بم سے کئی گنا زیادہ طاقتور ہے۔ جیمز میٹس نے وائٹ ہاؤس کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ امریکہ اپنے اور اپنے اتحادیوں جنوبی کوریا اور جاپان کے دفاع کی صلاحیت رکھتا ہے انہوں نے مزید کہا امریکہ یا اس کے کسی بھی علاقے بشمول گوام یا ہمارے اتحادیوں کو کسی بھی خطرے کا جواب بھرپور فوجی قوت سے دیا جائے گا اور یہ جواب ااثر اورشدید ہوگا۔ دوسری جانب امریکی صدر ٹرمپ نے متنبہ کیا ہے کہ امریکہ ایسے ملک کے ساتھ تجاررت کو بند کردے گا جوشمالی کوریا کے ساتھ کاروبار کرتا ہے۔ جنوبی کوریا کے فوجی سربراہوں نے کہا ہے کہ شمالی کوریا نے بظاہر جوہری تجربہ کیا ہے چین میں زلزلے پر نظر رکھنے والی انتظامیہ کا کہنا ہے کہ ممکن ہے کہ یہ کوئی دھماکہ ہے اس کا کہنا ہے کہ پہلے زلزلے کے بعد اسے ایک دوسرے زلزلے کا پتہ چلا ہے جو کہ 4.6 شدت کا تھا اور اسے انہوں نے دھنسنے سے تعبیر کیا ہے۔اے پی پی کے مطابق روسی صدر ولادی میر پیوٹن اور چینی صدر شی جن پنگ نے جزیرہ نما کوریا کو جوہری اسلحہ سے پاک کرنے کے معاملے میں اتفاق کر لیا ہے۔ جنگ پنگ اور پیوٹن کی ملاقات چین میں منعقدہ برکس سربراہی اجلاس کے دوران ہوئی۔ اس ملاقات میں دونوں سربراہان نے شمالی کوریا کے ہائیڈروجن بم کے تجربے پر مناسب جواب دینے اور جزیرہ نما کوریا کو جوہری اسلحہ سے پاک کرنے کے معاملات میں اتفاق رائے کیا ہے۔سلامتی کونسل کے ارکان نے شمالی کوریا پر مزید پابندیاں عائد کرنے کا مطالبہ کردیا ہے۔ اس حوالے سے اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کا اجلاس شمالی کوریا کے ہائیڈروجن بم تجربے کے بعد طلب کیا گیا۔ اجلاس امریکہ، برطانیہ، جاپان اور فرانس کی درخواست پر طلب کیا گیا۔ اقوام متحدہ میں امریکی سفیر نکی ہیلی نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اقوام متحدہ شمالی کوریا کے خلاف سخت اقدامات کرے۔ شمالی کوریا کے سپریم لیڈر کم جونگ جنگ کی طرف جارہے ہیں۔ امن کیلئے تمام ممبر ان کے ساتھ کام کرنے کیلئے تیار ہیں۔ برطانوی سفیر نے کہا کہ شمالی کوریا پوری دنیا کیلئے خطرہ ہے۔ ہم مسئلے کے پرامن حل کے خواہاں ہیں۔ فرانسیسی سفیر نے کہا کہ شمالی کوریا اب ایک علاقائی نہیں بلکہ عالمی خطرہ ہے۔ جاپان کے سفیر نے کہا کہ شمالی کوریا پر مزید دبائو بڑھانے کی ضرورت ہے۔ سویڈن کے سفیر نے کہا کہ شمالی کوریا پر پابندیوں پر عملدرآمد کی ضرورت ہے۔
شمالی کوریا/ امریکہ دھمکی