طالبان کو مذاکرات کی میز پر لانا صرف پاکستان کی ذمہ داری نہیں:ترجمان دفترخارجہ

Jul 05, 2018 | 15:54

ویب ڈیسک

پا کستان نے وا ضح کیا ہے کہ افغان طالبان کے ساتھ مذاکرات کی حمایت کرتے ہیں تاہم انہیں مذاکرات کی میز پر لانا صرف اسلام آباد کی ذمہ داری نہیں، جنوبی ایشیا کے لیے امریکی معاون نائب وزیر خارجہ ایلس ویلز کا دورہ پاکستان کامیاب رہا، عالمی برادری مقبوضہ وادی کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا نوٹس لے، سا بق و زیر اعظم نواز شریف کے برطانیہ میں سیاسی پناہ لینے کے حوالے سے معلومات کا علم نہیں، ممبئی ٹرائل میں بھارتی ہائی کمیشن کی جانب سے لکھے جانے والے خط کو وزارتِ داخلہ اور ایف آئی اے ڈیل کرنے رہے ہیں، پاکستان اور روس دوستانہ مشترکہ فوجی مشقیں کر رہے ہیں جسکا پہلا دور پاکستان اور دوسرا روس میں ہو گا۔ تر جمان دفتر خا رجہ ڈاکٹر فیصل نے جمعرات کو ہفتہ وار پر یس بر یفنگ میں کہا کہ پاکستان افغان طالبان کے ساتھ مذاکرات کی حمایت کرتا ہے، تاہم انہیں مذاکرات کی میز پر لانا صرف اسلام آباد کی ذمہ داری نہیں افغانستان کے تمامشرا کت دارو ں کو اس حوالے سے اپنا کردار ادا کرنا ہو گا۔ پاکستان متعدد بار کہہ چکا ہے کہ ہم افغانستان کے سیاسی حل کے حامی ہیں اور افغان صدر اشرف غنی کے اقدامات کی حمایت کرتے ہیں ہم یقین رکھتے ہیں کہ افغان مسئلے کا کوئی فوجی حل نہیں، امید ہے طالبان امن کے قیام کے لیے موقع کا فائدہ اٹھائیں گے ان کا مزید کہنا تھا کہ امریکا نے پاک افغان بارڈر مینیجمنٹ جیسے اقدامات میں پاکستان کے کردار کو سراہا ہے جنوبی ایشیا کے لیے امریکی معاون نائب وزیر خارجہ ایلس ویلز کا دورہ پاکستان کامیاب رہا ایلس ویلز نے افغانستان میں امن کے لیے پاکستانی اقدامات کی تعر یف کیایک سوال کے جواب میں انہو ں نے کہا کہ نواز شریف کے برطانیہ میں سیاسی پناہ لینے کے حوالے سے معلومات کا علم نہیںترجمان نے کہا کہ ممبئی ٹرائل میں بھارتی ہائی کمیشن کی جانب سے لکھے جانے والے خط کو وزارتِ داخلہ اور ایف آئی اے ڈیل کرنے رہے ہیں۔ بھارت مقبوضہ کشمیر میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کو بند کرے ۔ گذشتہ ہفتے بھارتی بربریت سے مزید 7 کشمیری شہید ہوئے انہو ں نے مطا لبہ کیا کی بھارت انسانی حقوق اور عالمی قوانین کی پاسداری کرے بھارت انسانی حقوق اور عالمی قوانین کی پاسداری کرے اور عالمی برادری مقبوضہ وادی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزی کا نوٹس لے۔انہوں نے مزید بتایا کہ مقبوضہ وادی میں بھارتی بربریت سے اس ہفتے مزید 7 کشمیری شہید ہوئے۔ ترجمان دفتر خارجہ کا کہنا تھا کہ پاکستان اور بھارت یکم جنوری اور یکم جولائی کو قیدیوں کی فہرستوں کا تبادلہ کرتے ہیں اور اس ماہ حکومت پاکستان نے 471 بھارتی قیدیوں کی فہرست بھارتی ہائی کمیشن کے حوالے کی ،کستان اور روس دوستانہ مشترکہ فوجی مشقیں کر رہے ہیں جسکا پہلا دور پاکستان اور دوسرا روس میں ہو گا۔

مزیدخبریں