دبئی ٹیسٹ میں پاکستان کی شاندار کارکردگی

05 فروری 2012
تبصرہ ........محمد صدیق
دبئی میں انگلینڈ پاکستان تیسرے ٹیسٹ کے دوسرے دن کے کھیل کے بعد پاکستان کی پوزیشن مضبوط ہو گئی ہے۔ پہلے دن دونوں جانب سے 16 وکٹ گرنے کے بعد وکٹ نے سیدھا کھیلنا شروع کر دیا۔ جس کی بڑی وجہ وکٹ میں نمی تھی۔ اسی لئے پہلے دن دونوں جانب سے باﺅلر چھائے رہے۔دوسرے دن وکٹ سوکھ چکی تھی اور پاکستان کے جو دونوں وکٹ گریں وہ بیٹسمینوں کی غلط شاٹ کھیلنے سے گریں۔ یونس خان اور اظہر علی بہت سنبھل کر ذمہ داری سے کھیلے اور پاکستان کو مضبوط پوزیشن میں لے آئے۔ اب تیسرے دن یعنی آج وکٹ سیدھا کھیلے گی اور پاکستان اس پر اچھا سکور بنا سکتا ہے اور پاکستانی بیٹسمین جتنا اس وکٹ پر ٹھہریں گے۔ بوٹوں کے رف اور لمبی بیٹنگ کرنے سے چوتھے دن سے پھروکٹ باﺅلروں خاصکر سپنروں کا ساتھ دینا شروع کر دے گی۔ یہ سب لکھنے کا مطلب یہی ہے کہ پاکستان مضبوط پوزیشن میں ہے اس ٹیسٹ میں ابھی تین دن کا کھیل باقی ہے۔پاکستان 350 رنز سے اوپر سکور بنانے کی پوزیشن میں بھی ہے اور سب سے بڑھ کر پاکستان کے پاس سعید اجمل اور عبدالرحمان کی صورت میں دنیا کے دو بہترین سپنروں کی جوڑی موجود ہے اس لئے لگ رہا ہے کہ پاکستان یہ ٹیسٹ بھی جیت کر انگلینڈ کے خلاف کلین سویپ کرے گا۔ انگلینڈ دونوں ٹیسٹ ہار کر انڈرپریشر ہے اور اس نے اس وکٹ پر آخری اننگ کھیلنی ہے۔