فوج ہر جا رحیت سے نمٹنے کیلئے تیار‘ افغان مذاکرات ناکام بنانے کی کوشش کرنیوالے امن کے دشمن ہیں: جنرل راحیل

05 اگست 2015

اسلام آباد (سٹاف رپورٹر + نوائے وقت رپورٹ + نیوز ایجنسیاں) آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے کہا ہے کہ افغان حکومت اور طالبان کے درمیان مذاکرات ہی افغانستان میں پائیدار امن قائم کرنے کا واحد قابل اعتماد ذریعہ ہیں۔ وہ کور کمانڈرز کانفرنس سے خطاب کررہے تھے۔ آئی ایس پی آر کے مطابق کور کمانڈرز کانفرنس جنرل راحیل شریف کی زیر صدارت منعقد ہوئی۔ شرکاء نے ملک کی اندرونی و بیرونی سلامتی، آپریشن ضرب عضب اور انٹیلی جنس بنیادوں پر جاری آپریشنز میں پیشرفت کا جائزہ لیا۔ جنرل راحیل نے ملک کی سلامتی میں واضح تبدیلی پر اطمینان کا اظہار کیا۔ شرکاء نے کنٹرول لائن پر حربی تیاریوں کی صورتحال کا بھی جائزہ لیا۔ آرمی چیف نے کہا کہ ہم کسی بھی خطرہ کا بھرپور جواب دینے کیلئے مکمل طور پر تیار ہیں۔ انہوں نے کہا افغان مذاکرات کو پٹڑی سے ہٹانے کی کوشش کرنے والے افغانستان اور اس خطہ میں قیام امن کے دشمن ہیں۔ کور کمانڈرز کانفرنس ایسے وقت منعقد ہوئی جب کنٹرول لائن اور ورکنگ بائونڈری پر بھارت نے محاذ گرم کررکھا ہے جس کے جواب میں آرمی چیف نے مذکورہ بالا ریمارکس دیئے۔ آرمی چیف نے لائن آف کنٹرول پر پاک فوج کی مستعدی کو سراہا۔ اس موقع پر آرمی چیف نے اپنے خطاب میں کہا کہ افغانستان میں امن کیلئے مذاکرات ہی بہترین راستہ ہیں۔ افغان حکومت اور طالبان میں امن مذاکرات ناکام بنانے کی کوشش کرنے والے افغانستان اور خطے کے امن کے دشمن ہیں۔ بھارت کی سرحدی خلاف ورزیوں کا معاملہ بھی زیر غور آیا۔ آرمی چیف نے دہشت گردی کے خلاف جاری آپریشنز میں پیشرفت پر اطمینان کا اظہارکیا۔ آرمی چیف جنرل راحیل شریف نے سیلاب سے متاثرہ علاقوں میں امدادی کارروائیوں سے متعلق تمام کور کمانڈرز کو ہنگا می اقدامات کرنے اور تمام وسائل بروئے کار لانے کی ہدایت جاری کی۔ کورکمانڈرز کانفرنس سے خطاب کے دوران انہوں نے کہاکہ کنٹرول لائن اور ورکنگ باونڈری پر بھارتی بلااشتعال فائرنگ جنگ بندی معاہدے کی خلاف ورزی ہے۔