متروکہ وقف املاک بورڈ کا اجلاس‘ 2 ارب 90 کروڑ کے بجٹ کی منظوری

05 اگست 2015

لاہور (سپیشل رپورٹر) متروکہ وقف املاک بورڈ کا 292واں جبکہ نئے منتخب ہونے والے ممبران کا پہلا اجلاس چیئرمین صدیق الفاروق کی صدارت میں مرکزی دفتر میں ہوا۔ اجلاس میں بورڈ کے ممبران نے محکمہ کے سالانہ بجٹ 2 ارب 90کروڑ کے بجٹ اور محکمے کے 51 کروڑ 70 لاکھ روپے کے ترقیاتی بجٹ کی بھی منظوری دی گئی۔ چیف انجینئر کے عہدہ کیلئے نئی آسامی کی بھی منظوری دی گئی۔ اجلاس میں سیکرٹری بورڈ ثقلین عباس، ایڈیشنل سیکرٹری شرائنز خالد علی، سردار شام سنگھ، الیاس خان، نائلہ ظفر، کرنل (ر) مبشر جاوید، کیپٹن (ر) محمد یونس درانی، مسز عائشہ مصدق، مکیش کمار کرارا، پیرازادہ اورنگزیب شاہ، سردار منور زمان، سردار رمیش سنگھ اروڑا، محمد منصف جان اور چاروں صوبوں، ریونیو اور فنانس ڈویژن کے ممبران نے شرکت کی۔ بورڈ کا اجلاس 25آئٹمز پر مشتمل تھا جس کی منظوری بورڈ نے دی۔ بورڈ نے پاکستان میں موجود اقلیتوں کے مقدس مقامات جس میں پنجہ صاحب، گوردوارہ گورونانک ننکانہ صاحب، کٹاس راس چوہا سیدن شاہ، ہنگلاج ماتا جی مندر، سعد بیلامندر سمیت دیگر مقدس مقامات کی تزئین وآرائش اور ان کے ترقیاتی کاموں اور کراچی میں ایک نئے مندر کی تعمیر کیلئے 1ارب روپے کی منظوری بھی دی گئی۔ اس موقع پر چیئرمین بورڈ صدیق الفاروق نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ہم نے بورڈ اور محکمہ کے تعاون سے متروکہ وقف املاک کو جو کہ پچھلے4سالوں سے14کروڑ روپے خسارے میں جا رہا تھااسے منافع میں لے آئے ہیں اور اس وقت 13کروڑ 50لاکھ روپے منافع میں جا رہا ہے اور 2016ء دسمبر تک محکمہ کو ایک ارب کے منافع تک لے آئیں گے۔ انہوں نے کہا کہ محکمہ لینڈ اور دیگر ریکارڈز کو کمپیوٹرائزڈ کرنے کا آغاز ہو چکا ہے۔ ہمیں محکمہ کے اندر بہت زیادہ کرپشن کا سامنا ہے اس کی روک تھام کے لئے ہم دن رات کام کررہے ہیں۔

EXIT کی تلاش

خدا کو جان دینی ہے۔ جھوٹ لکھنے سے خوف آتا ہے۔ برملا یہ اعتراف کرنے میں لہٰذا ...