سپریم کورٹ نے قتل کیس میں مذہبی رہنما کی ضمانت قبل از گرفتاری مسترد کر دی

05 اگست 2015

لاہور(وقائع نگار خصوصی)سپریم کورٹ نے قتل کے مقدمہ میں ملوث ایک مذ ہبی جماعت کے رہنما اشرف شاکر کی ضمانت قبل از گر فتاری مسترد کر دی ۔ سپریم کورٹ لاہور رجسٹری میں جسٹس میاں ثاقب نثار کی سر براہی میں دو رکنی بنچ نے کیس کی سماعت کی۔ملزم اشرف شاکر کے خلاف تھانہ شاہدرہ میں پو لیس کانسٹیبل کو قتل کرنے کا مقدمہ درج ہے۔ استغاثہ کے مطابق بیگم کوٹ کی ایک مسجد کے خطیب اور ایک مذ ہبی جماعت کے رہنما اشرف شاکر پر 2013 ء میں زبان بندی کے کیس میں نامزد ملزم قاری یوسف رضوی کو پولیس کی حراست سے زبر دستی چھڑانے اور پولیس مقابلے میں ا یک کانسٹیبل کو گولی مار کر قتل کرنے کا الزام ہے ۔ عدالت کے روبرو ملزم کے وکیل نے بتایا کہ ملزم عدالت کے روبرو پیش ہونے کے لئے آرہا تھا کہ راستے میں ملزم کا ایکسیڈنٹ ہو گیا اور وہ میو ہسپتال میں داخل ہے اس لئے وہ عدالت میں خود پیش نہیں ہو سکتا لہذا عدالت ملزم کی ضمانت قبل از گر فتاری کی درخواست منظور کر نے کے احکامات جاری کرے ۔فریقین کے دلائل کے بعد عدالت نے ملزم کی ضمانت قبل از گرفتاری کی درخواست مسترد کر دی ۔