الیکشن کمشن کو بیورو کریسی میں ردوبدل کا اختیار مل جائیگا

04 فروری 2013


اسلام آباد (جاوید صدیق) اہم انتخابی اصلاحات کا بل ماہ رواں میں قومی اسمبلی میں پیش کردیا جائے گا۔ نوائے وقت کوقابل اعتماد ذرائع نے بتایا کہ سینٹ اور قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹیوں اور الیکشن کمشن کے حکام کی حال ہی میں ہونے والی درجنوں ملاقاتوں میں انتخابی اصلاحات کے بل کو حتمی شکل دی گئی۔ ان ذرائع کے مطابق انتخابی اصلاحات کے بل کے تحت الیکشن کمشن کو بھارتی الیکشن کمشن کی طرح چاروں صوبوں اور وفاق کی بیورو کریسی میں ردوبدل کرنے کا اختیار مل جائے گا۔ جس کے بعد الیکشن کمشن ان تمام افسروں کو تبدیل کردے گا جس کے بارے میں اعتراض ہوگا کہ وہ عام انتخابات پر اثر انداز ہوسکتے ہیں۔ذرائع کے مطابق اصلاحات کے بل میں یہ بھی شامل کیا جارہا ہے کہ جب امیدوار کاغذات نامزدگی واپس کریں گے تو ان کے کاغذات کی جانچ پڑتال کے دوران ایف بی آر کے ٹیکس گوشواروں‘ امیدوار کی جانب سے لئے گئے بنک قرضوں اور معاف کرائے گئے قرضوں کی تفصیلات تک رسائی حاصل ہوجائے گی۔ ذرائع نے دعویٰ کیا کہ انتخابی اصلاحات کے بل میں امیدواروں کے کاغذات کی چھان بین کے لئے 30دن کی مدت مقرر کی جارہی ہے۔ذرائع کے مطابق انتخابی اصلاحات کے بل پر ساری سیاسی جماعتوں نے اتفاق کرلیا ہے۔ دریں اثناءچیف الیکشن کمشنر آئندہ چند دنوں میں چاروں صوبوںکا دورہ کریں گے جہاں وہ صوبائی سطح کی سیاسی قیادت‘ سینئر صحافیوں سے ملاقاتیں کریں گے۔