حکومت نے نئے صوبہ پر آئینی بل لانے کا ڈرامہ کیا تو اپنا بل لائیں گے : اسحق ڈار

04 فروری 2013

لاہور (خصوصی نامہ نگار) مسلم لیگ (ن) کے رہنما اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ اگر حکومت نے نئے صوبے سے متعلق آئینی بل لانے کا ڈرامہ کیا تو مسلم لیگ (ن) بھی اپنا آئینی بل لائیگی۔ لاہور میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ملک میں اگر ایماندار قیادت آجائے تو ملک خوشحال ہوجائیگا۔ عوام جلد دیکھیں گے کہ ملک میں ایماندار قیادت آئےگی اور ملک ایک بار پھر بھکاری بننے کے بجائے دوسروں کو مدد دینے والا ملک بن جائیگا۔ انہوں نے کہا کہ نگران وزیراعظم کیلئے طاہر القادری سے وعدہ ہمارا مسئلہ نہیں ہے۔ ملک میں فساد پھیلانے والوں کے ساتھ سختی کے ساتھ نبٹنا چاہئے۔ نگران وزیراعظم کے بارے میں حکومت اور اپوزیشن نے ملکر فیصلہ کرنا ہے۔ نوازشریف جلد مسلم لیگ (ن) کے منشور کا اعلان کرینگے۔ انہوں نے کہا کہ نگران سیٹ اپ لانے میں 6 ہفتے رہ گئے ہیں۔ لسانی بنیادوں پر ملک کو ٹکڑے ٹکڑے کرنا درست نہیں، نئے صوبوں سے متعلق کمشن الیکشن سے پہلے ڈرامہ ہے۔انہوں نے کہا کہ مسلم لیگ (ن) ایک امپورٹڈ شخص کے ذریعے الیکشن کمشن کو متنازع بنانے کیخلاف دھرنا دے رہی ہے۔داتا دربار ہستپال کی بلڈنگ اور لیبارٹری کے افتتاح کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے مزید کہا کہ نئے صوبے بنانے کا شوشہ پنجاب کو ٹکڑے کرنے کا منصوبہ ہے ، حکومت نئے صوبے کا بل لائی تو ہم نے بھی اپنی تیاریاںمکمل کررکھی ہیں، مسلم لیگ (ن) بھی آئینی مسودہ پیش کردے گی، الیکشن کمشن تحلیل کرنے کا مطالبہ کرنے والے خود بھی آئین پڑھ لیں ‘سیاستدانوں کے دئیے ہوئے ناموں میں سے ہی کوئی نگراں وزیر اعظم بنے گا اور نگراں سیٹ اپ طویل ہونے کی باتیں محض افواہیں ہیں‘ انہوں نے نئے صوبے بنانے کے معاملے کو سیاسی ڈرامہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ مسلم لیگ (ن) نئے صوبوں کے خلاف نہیں لیکن یہ لسانی بنیادوں پر تشکیل نہیں پانے چاہئیں۔