سی فوڈ کی برآمد پر پابندی سے پاکستان کو سالانہ 5 کروڑ ڈالر نقصان

04 فروری 2013

لاہور (نیوز ایجنسیاں) پنجاب فشریز ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر جنرل محمد اشرف نے کہا ہے کہ یورپی یونین کی جانب سے سی فوڈ کی درآمد پر پابندی کے باعث پاکستان کو سالانہ 5 کروڑ ڈالر نقصان ہو رہا ہے۔ پنجاب فشریز ڈیپارٹمنٹ کے ڈائریکٹر جنرل محمد اشرف نے کہا کہ کراچی فش ہاربر پر حفظان صحت کے ناقص انتظامات کے باعث یورپی یونین نے 2007ءمیں پاکستان سے سی فوڈ کی درآمد پر پابندی عائد کر رکھی گئی، جس سے اس صنعت کو سالانہ 5 کروڑ ڈالر نقصان ہو رہا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ فشریز میں یورپی یونین کے معیار کے مطابق صفائی اور معیار میں بہتری کے اقدامات کے ذریعے پاکستانی سی فوڈ کی درآمد بحال کرنے پر رضامند کرنے کے لئے کوششیں جا رہی ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ای یو کی جانب سے پابندی کے باوجود نئی مارکیٹس کی دریافت سے پاکستانی مچھلی اور مچھلی کی مصنوعات کی برآمد بڑھ رہی ہے، تاہم یورپی یونین کو برآمد بحال ہونے سے سی فوڈ ایکسپورٹس 35 کروڑ ڈالر سے تجاوز کر جائے گی۔