گیسوئے تاب دار کو اور بھی تاب دار کر

04 دسمبر 2017

گیسوئے تاب دار کو اور بھی تاب دار کر
ہوش و خِردَ شکارکر،قلب و نظر شکار کر
عشق بھی ہو حجاب میں،حُسن بھی ہوحجاب میں
یا تو خود آشکار ہو یا مجھے آشکار کر
بالِ جبریل