میچ فکسنگ کیس کے فیصلے تک آئی سی سی نے سلمان‘ آصف اور عامر کو معطل کردیا‘ ویڈیو مشکوک‘ تینوں بے گناہ ہیں : واجد شمس الحسن

03 ستمبر 2010
لاہور + لندن (سپورٹس رپورٹر + مانیٹرنگ ڈیسک + ریڈیو نیوز + ایجنسیاں) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل نے میچ فکسنگ کے الزام میں زیر عتاب قومی کرکٹ ٹیم کے ٹیسٹ کپتان سلمان بٹ‘ باولرز محمد آصف اور محمد عامر کو میچ فکسنگ کیس کے فیصلے تک معطل کر دیا ہے‘ اینٹی کرپشن کوڈ 2 کے تحت یہ فیصلہ عبوری طور پر جاری کیا گیا جس کے تحت تینوں کھلاڑیوں پر میچ فکسنگ کیس کے فیصلے تک کسی بھی سطح کی کرکٹ کھیلنے پر پابندی ہو گی‘ آئی سی سی نے تینوں کھلاڑیوں کو فیصلے سے آگاہ کر دیا ہے‘ کھلاڑی 14 دن کے اندر فیصلے کے خلاف اپیل کر سکیں گے۔ ماہرین کے مطابق جرم ثابت ہونے پر آئی سی سی 5 سال سے تاحیات تک پابندی لگا سکتی ہے۔ قبل ازیں آئی سی سی کے مطالبے پر تینوں کھلاڑیوں کو انگلینڈ کے خلاف کھیلے جانے والے میچوں سے الگ کر دیا گیا تھا۔ اے این این کے مطابق کپتان سلمان بٹ‘ فاسٹ باولرز محمد آصف او ر محمد عامر نے جمعرات کو چیئرمین پاکستان کرکٹ بورڈ اعجاز بٹ سے لندن میں ملاقات کی جس میں تینوں کھلاڑیوں نے چیئرمین پی سی بی کو یقین دلایا کہ وہ بے قصور ہیں اور کچھ سمجھ نہیں آ رہا کہ مبینہ بکی مظہر مجید انہیں کیوں پھنسانا چاہتا ہے۔ ملاقات میں فیصلہ کیا گیا ہے کہ تینوں کھلاڑیوں کو انگلینڈ میں کھیلے جانے والے میچوں میں شامل نہیں کیا جائے گا اور کھلاڑیوں پر لگائے جانے والے الزامات کا دفاع کیا جائے گا۔ ملاقات کے بعد کرکٹ ٹیم کے مینجر یاور سعید نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کسی کھلاڑی کو معطل نہیں کیا گیا تاہم تینوں کھلاڑی برطانیہ کے خلاف ٹی 20 اور ون ڈے سیریز میں حصہ نہیں لیں گے۔ انہوں نے کہا برطانیہ کے خلاف کھیلے جانے والے دو ٹونٹی ٹونٹی میچز میں پاکستان کے 13 کھلاڑی حصہ لیں گے جو اس وقت برطانیہ میں موجود ہیں جبکہ ون ڈے سیریز کے لئے متبادل تین کھلاڑی طلب کئے جائیں گے۔ بعدازاں تینوں کھلاڑیوں نے برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمشنر واجد شمس الحسن سے بھی ملاقات کی۔ مانیٹرنگ ڈیسک کے مطابق سکاٹ لینڈ یارڈ آج سپاٹ فکسنگ کے الزامات کے شکار پاکستانی کرکٹ ٹیم کے کھلاڑیوں محمد عامر ‘ محمد آصف اور سلمان بٹ سے پوچھ گچھ کرے گا۔ ریڈیو مانیٹرنگ کے مطابق بی بی سی سے گفتگو کرتے ہوئے برطانیہ میں پاکستانی ہائی کمشنر واجد شمس الحسن نے کہا ویڈیو مشکوک اور تینوں کھلاڑیوں کو پھنسانے کی سازش ہے‘ میڈیا 3 دن سے ان کا ٹرائل کر رہا ہے‘ ہم ان کی حفاظت کریں گے۔ میچ فکسنگ کے الزامات تینوں کھلاڑیوں کو پھنسانے کی سازش ہے۔ نیوز آف دی ورلڈ کی جانب سے پیش کردہ ویڈیو میں یہ معلوم نہیں ہوتا کہ یہ کب اور کس دن کی ہے‘ یہ ویڈیو ہی مشکوک ہے اس سے کوئی الزام ثابت نہیں ہوتا۔ پاکستانی ہائی کمشنر کے دعویٰ کو نیوز آف دی ورلڈ نے مضحکہ خیز قرار دے دیا۔ اسلام آباد سے خبر نگار خصوصی کے مطابق وفاقی وزیر داخلہ رحمن ملک سے پاکستان میں برطانیہ کے قائم مقام ہائی کمشنر پیٹر ٹمبر نے جمعرات کو ملاقات کی اس دوران برطانیہ میں پاکستان کرکٹرز کے خلاف سپاٹ فکسنگ کے الزامات کی تحقیقات سمیت مختلف امور پر تبادلہ خیال کیا گیا۔ برطانیہ ہائی کمشنر نے وزیر داخلہ کو بتایا کہ سکاٹ لینڈ یارڈ پولیس کی تحقیقات مکمل ہونے کے بعد پاکستان کو آگاہ کیا جائے گا۔ رحمن ملک نے کہا کہ میچ فکسنگ کے الزامات کی وجہ سے پاکستان کی بدنامی ہوئی ہے اور یہ پاکستان کے خلاف سازش بھی ہو سکتی ہے اس لئے ہم تحقیقات کا انتظار کر رہے ہیں‘ تحقیقات میں کوئی الزام ثابت ہوا تو حکومت سخت کارروائی کرے گی۔ آن لائن کے مطابق برطانوی ہائی کمشنر نے بتایا انکوائری رپورٹ جلد حکومت پاکستان کے حوالے کی جائے گی۔ رائٹرز کے مطابق ٹیم ذرائع کا کہنا ہے یہ فیصلہ برطانوی اور انٹرنیشنل کرکٹ کونسل کے مطالبے پر کیا گیا۔ ادھر ہائی کمشن میں محمد عامر ‘ محمد آصفسلمان بٹ سے ملاقات کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے پاکستان کے ہائی کمشنر واجد شمس الحسن نے کہا ہے کہ جرم ثابت ہونے تک تینوں کھلاڑی بے گناہ ہیں‘ تینوں الزامات کے باعث ذہنی اذیت کا شکار ہیں اس لئے رضاکارانہ طور پر انگلینڈ کے خلاف سیریز کے باقی ماندہ میجز کھیلنے سے دستبرداری اختیار کر رہے ہیں۔ سپورٹس رپورٹر کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ کے اعلان کے مطابق انگلینڈ کے خلاف دو ٹونٹی ٹونٹی میچز کے لئے پاکستان کے موجودہ 13 کھلاڑی ہی ٹیم کا حصہ ہوں گے۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ اس بات کا فیصلہ چیئرمین پی سی بی اعجاز بٹ اور ٹیم مینجمنٹ نے مشاورت کے بعد کیا۔ انگلینڈ کے خلاف پہلا ٹونٹی ٹونٹی میچ 5 ستمبر کو جبکہ دوسرا 7 ستمبر کو ہو گا۔ آن لائن کے مطابق واجد شمس الحسن نے کہا کھلاڑی تحقیقات مکمل ہونے تک انگلینڈ میں ہی رہیں گے۔ کھلاڑیوں کے پاسپورٹ ٹیم انتظامیہ کے پاس ہیں۔ کھلاڑیوں پر الزامات ثابت نہ ہوئے تو اخبار کے خلاف قانونی چارہ جوئی کریں گے۔ انہوں نے کہا سکاٹ لینڈ یارڈ سے کوئی میٹنگ نہیں ہو گی۔ انہوں نے کہا کہ تحقیقات جاری ہیں فی الحال کچھ نہیں کہا جا سکتا مجھے یقین ہے کھلاڑی بے گناہ ہیں کھلاڑیوں کا ہرممکن دفاع کریں گے۔ کھلاڑیوں کی مدد کرنا کمشن کی ذمہ داری ہے۔ کھلاڑی بھاگنے والے نہیں کوئی کھلاڑی واپس نہیں جا رہا۔ انہوں نے کہا جس طرح عمران خان بوتھم کے خلاف سرخرو ہوئے اسی طرح ہم بھی سرخرو ہوں گے۔ جی این آئی کے مطابق آئی سی سی چیف ہارون لورگاٹ نے لندن میں چیئرمین پی سی بی اعجاز بٹ سے ملاقات کی‘ جس کے دوران آئی سی سی کی طرف سے مشکوک کھلاڑیوں کو معطل کرنے کا مطالبہ کیا گیا۔ ملاقات کے دوران میچ فکسنگ کی تحقیقات کے حوالے سے تبادل خیال کیا گیا۔ ذرائع کا کہنا ہے آئی سی سی نے پاکستان کرکٹ بورڈ پر زور دیا ہے کہ میچ فکسنگ کے الزام کی زد میں آنے والے پاکستانی کھلاڑیوں کو معطل کر دیا جائے۔ ثناءنیوز کے مطابق ٹاﺅنٹن میں پاکستان اور سمرسٹ کے درمیان میچ سے قبل میڈیا سے بات کرتے ہوئے منیجر یاور سعید نے کہا تینوں کھلاڑیوں کیخلاف تحقیقات ابھی جاری ہیں،تاہم انہیں انگلینڈ کیخلاف بقیہ سیریز سے باہر رکھنے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔