نالج پارک خطے میں پہلا منفرد تعلیمی مرکز ہو گا‘ انتہا پسندی پر صرف گولی سے قابو ممکن نہیں: شہباز شریف

03 مئی 2014

لاہور (خصوصی رپورٹر) وزیراعلیٰ محمد شہبازشریف نے کہا ہے کہ لاہور میں قائم ہونیوالا نالج پارک جنوبی ایشیا کے خطے میں بین الاقوامی معیار کا پہلا منفرد تعلیمی مرکز ہوگا جس میں اساتذہ اور ملکی و غیر ملکی طلبہ کیلئے رہائشگاہیں، شاپنگ مال، تفریحی مراکز اور زندگی کی دیگر تمام سہولتیں دستیاب ہوں گی۔ پاکستان نے دہشت گردی کیخلاف جنگ میں 40 ہزار قیمتی انسانی جانوں کی قربانیاں دی ہیں۔ دہشت گردی کے خاتمے کیلئے ہمارا عزم کسی بھی شک و شبہ سے بالاتر ہے۔ میں دیانتداری سے یہ سمجھتا ہوں کہ عسکریت اور انتہاپسندی کے موجودہ رجحان پر صرف بندوق کی گولی سے قابو نہیں پایا جا سکتا۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے گذشتہ روز لندن میں نالج پارک کے منصوبے کی تعارفی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ تقریب میں برطانوی سرمایہ کاروں، یونیورسٹیز کے سربراہوں، ڈینز اور ماہرین تعلیم نے بڑی تعداد میں شرکت کی اور لاہور میں نالج پارک کے قیام کے منصوبے میں گہری دلچسپی کا اظہارکیا۔ شہباز شریف نے اپنے خطاب میں کہا کہ اعلی تعلیم کے اپنی نوعیت کے اس منفرد مرکز کے قیام کا بنیادی مقصد ان پاکستانی نوجوانوں کو اپنے ملک میں اعلی تعلیم کی سہولتیں فراہم کرنا ہیں جن کے پاس مہنگی تعلیم حاصل کرنے کیلئے بیرون ملک جانے کیلئے وسائل نہیں ہیں۔ اس نالج پارک میں قائم ہونیوالے تعلیمی اداروں میں صرف پاکستان کے ہی نہیں بلکہ دوسرے ممالک کے طالب علم بھی تعلیم حاصل کریں گے۔ نالج پارک میںغیر ملکی تعلیمی اداروں کے کیمپس کھولنے کیلئے سرمایہ کاروں کو سہولتیں دی جائیں گی۔ پنجاب کی پہلی انفارمیشن ٹیکنالوجی یونیورسٹی کا کیمپس بھی نالج پارک میں بنے گا۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور برطانیہ کی دوستی مضبوط تاریخی اور ثقافتی رشتوں پر استوار ہے اور ہم تعلیم کے میدان میں برطانیہ کے تعاون کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ پاکستان میں انتہا پسندی اور تشدد کے رجحانات راتوں رات پیدا نہیں ہوئے اور اب انہیں ختم ہونے میں بھی وقت لگے گا، تاہم ہمیں پاکستان کی موجودہ صورتحال کو اسکے صحیح تاریخی تناظر میں دیکھنے کی ضرورت ہے۔ پاکستان نے دہشت گردی کیخلاف جنگ میں 40ہزار قیمتی انسانی جانوں کی قربانیاں دی ہیں اور دہشت گردی کے خاتمے کیلئے ہمارا عزم کسی بھی شک و شبہ سے بالاتر ہے۔ ہمیں دہشت گردی کے مختلف اسباب کا زمینی حقائق کے مطابق جائزہ لیکر انہیں دور کرنا ہوگا۔ شہباز شریف نے کہا کہ تعلیم کو عام کیے بغیر عوام میں رواداری، برداشت اور وسعت نظری کے کلچر کو متعارف نہیں کرایا جاسکتا، اسی طرح ہمیں معصوم مگر غریب نوجوانوں کو انتہاپسندوں کے چنگل سے نجات دلانے کیلئے ان کی بیماری اور بھوک کا مداوا کرنا ہوگا۔ پیشتر ازیں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے صوبائی وزیر تعلیم رانا مشہود احمد نے کہا کہ لاہور کی پرائم لوکیشن پر 852ایکڑ اراضی پر نالج پارک جنوبی ایشیا کی تعلیمی معیشت میں ایک انقلاب ثابت ہوگا۔ پاکستان میں برطانیہ کے ہائی کمشنر فلپ بارٹن نے اس موقع پر اپنے خطاب میں وزیراعظم محمد نوازشریف اور وزیراعلیٰ پنجاب محمد شہباز شریف کی فروغ تعلیم کیلئے کاوشوں اور اقدامات کی تعریف کرتے ہوئے کہا کہ تعلیم کے میدان میں مثبت پیشرفت کی جارہی ہے اور برطانیہ پنجاب سمیت چاروں صوبوں میں فروغ تعلیم کیلئے اٹھائے جانیوالے اقدامات کے حوالے سے تعاون جاری رکھے گا۔ انہوں نے کہا کہ لاہور میں بہت جلد برطانیہ کا ڈپٹی ہائی کمشن قائم کیا جائیگا۔ علاوہ ازیں شہباز شریف سے گذشتہ روز لندن میں برطانوی سرمایہ کار کمپنیوں کے سربراہوں اور نمائندوں نے الگ الگ ملاقاتیں کیں۔ وزیراعلیٰ نے برطانوی سرمایہ کار کمپنیوں کو پنجاب میں سرمایہ کاری کی دعوت دی۔ شہباز شریف نے برطانوی سرمایہ کاروں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ پنجاب حکومت سرمایہ کاری کے فروغ کیلئے ٹھوس اقدامات کررہی ہے۔ برطانوی کمپنیوں سمیت تمام غیر ملکی سرمایہ کاروںکی ایک ایک پائی محفوظ ہوگی۔ شفافیت پنجاب حکومت کا طرہ امتیاز ہے، برطانوی سرمایہ کاروں کا پیسہ امانت سمجھ کر عوام کی فلاح و بہبود پر خرچ ہوگا۔ علاوہ ازیں لندن میں مقیم پاکستانیوں کی جانب سے دئیے گئے استقبالئے سے خطاب کرتے ہوئے شہباز شریف نے کہا ہے کہ گذشتہ حکومت پاکستان کی تاریخ کا سیاہ ترین دور تھا۔ مسلم لیگ (ن) کی حکومت میں کرپشن کا کوئی کیس سامنے نہیں آیا۔ چین نے پاکستان کیلئے 32 ارب ڈالر کا پیکیج دیا ہے، پاکستان جاتے ہی 1300 میگاواٹ کا سنگ بنیاد رکھیں گے۔ آئندہ 7 سالوں میں پاکستان کو دوست ممالک کی مدد سے 20 ہزار میگاواٹ بجلی ملے گی۔ بجلی کے منصوبوں پر 3 ارب ڈالر خرچ ہونگے۔ ہمارے دوستوں نے نوازشریف کے اقتدار میں آنے کا انتظار کیا ہے۔ سابقہ حکمرانوں کو غیر ملکی دوروں میں کوئی مالی امداد نہیں ملی۔ دوست ممالک نے پاکستان حکومت پر مکمل اعتماد ظاہر کیا ہے۔