افغانستان میں شکست پر امریکہ اور بھارت نے پاکستان کو میدان جنگ بنا دیا: حافظ سعید

03 مئی 2014

لاہور (وقائع نگار خصوصی) امیر جماعۃ الدعوۃ پاکستان پروفیسر حافظ محمد سعید نے کہا ہے کہ افغانستان میں شکست کے بعد امریکہ، بھارت اور ان کے اتحادیوں نے پاکستان کو میدان جنگ بنا دیا ہے، ملک میں لگی آگ بجھانے کیلئے وکلاء سمیت قوم کا ہر طبقہ بھرپور کردار ادا کرے۔ آرمی چیف کا کشمیرکو پاکستان کی شہ رگ قرار دینا انتہائی خوش آئند ہے۔ نریندر مودی کی طرف سے گائے ذبح کرنے پر پابندی اور بابری مسجد کی جگہ رام مندر کی تعمیر کے اعلانات گیدڑ بھبھکیاں ہیں۔ جس دن ایسا کرنے کی کوشش ہوئی بھارت کے 30 کروڑ مسلمان میدان میں کھڑے ہوں گے۔ بھارت اور امریکہ بلوچستان و سندھ میں علیحدگی کی تحریکیں اور قبائلی علاقوں میں شورشیں پروان چڑھا رہے ہیں۔ جماعۃ الدعوۃ کی ریلیف سرگرمیوں کے ذریعہ علیحدگی کی تحریکیں دم توڑ رہی ہیں۔ بلوچستان اور سندھ کے دور دراز علاقوں میں گیارہ سو پانی کے کنوئیں کھدوائے جائیں گے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے لاہور ہائیکورٹ بار ایسوسی ایشن کی دعوت پر کراچی شہداء ہال میں جنرل ہائوس اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ حافظ محمد سعید نے کہاکہ قائد اعظم محمد علی جناحؒ نے کشمیر کو پاکستان کی شہ رگ قرار دیا تھا لیکن اسی کشمیر میں انڈیا پاکستان کی طرف آنیوالے دریائوں پر62ڈیم مکمل کر چکا ہے۔ ہمارے ہاں بجلی کا بحران اسی وجہ سے ہے۔ بھارت ہمارے پانیوں سے اپنے ریگستان اور چولستان آباد کر رہا ہے اور ہماری صنعت و زراعت تباہ ہو رہی ہے ۔ آرمی چیف نے کشمیر کو پاکستان کی شہ رگ قرار دیا ہے تو میں انہیں یاد دلانا چاہتا ہوں کہ جب انڈیا نے مقبوضہ کشمیر پر فوجی قبضہ کیا تو قائداعظم نے اس وقت فوج کے کمانڈر انچیف کو اپنی فوج کشمیر میں داخل کرنے کا حکم دیا تھا جسے اس نے ماننے سے انکار کر دیا تھا۔ اب آرمی چیف جنرل راحیل کو قائداعظم کے احکامات مدنظر رکھتے ہوئے اپنی ذمہ داریاں نبھانی چاہئیں۔ انہوں نے کہاکہ نظریہ پاکستان کو پروان چڑھانے میں وکلاء کا اہم کردار رہا ہے۔ قائداعظم خود بھی وکیل تھے جنہوں نے مسلمانان برصغیر کو متحد کیا۔ آج بھی جب دشمنان اسلام کی ملک میں خوفناک مداخلت جاری ہے ان کی سازشوں کو ناکام بنانے کے لئے بھی وکلاء کو کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہاکہ ایک ریمنڈ ڈیوس لاہور سے پکڑا گیا تھا لیکن ہزاروں ریمنڈ ڈیوس پاکستان میں موجود اور متحرک ہیں۔ قوم سوال کرتی ہے کہ انکو کون پکڑے گا۔ حافظ محمد سعید نے کہاکہ جماعۃ الدعوۃ آواران، تربت، پنجگور، خضدار و دیگر علاقوں جو علیحدگی پسندوں کا گڑھ سمجھے جاتے ہیں وہاں کروڑوں روپے کے منصوبہ جات پر کام کر رہی ہے۔ چار سو سے زائد کنویں مکمل کئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ دشمنوں کی لگائی ہوئی آگ کو بجھانے، فرقہ واریت میں تشدد کو روکنے اور لسانیت کے سلسلوں کو روکنے کے لئے ایک ہی نسخہ کیمیا لاالہ الااللہ ہے۔ پاکستان اسلام کی جاگیر ہے۔ پاکستان کے نامکمل ایجنڈے کو پورا کرنا ہو گا پاکستان کی ’’پ‘‘ پنجاب اور ’’ک‘‘ کشمیر کا ہے کشمیر کے بغیر پاکستان نا مکمل ہے۔ امریکہ کے افغانستان کی طرح انڈیا بھی کشمیر سے نکلے گا۔ ہمیں بھارت سے یکطرفہ دوستی پروان چڑھانے اور تجارت کرتے وقت اس کے ماضی کو بھی سامنے رکھنا چاہئے۔ لاہور ہائیکورٹ بارایسوسی ایشن کے صدر شفقت چوہان ایڈووکیٹ نے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ موجودہ حالات میں جس طرح جماعۃالدعوۃ  کی جانب سے نظریہ پاکستان کیلئے آواز بلند کی جارہی ہے وہ لائق تحسین ہے۔ مسئلہ کشمیرکو پس پشت نہیں ڈالا جانا چاہئے۔ لاہور ٹیکس بار ایسوسی ایشن کے نائب صدر نعمان یحییٰ ایڈووکیٹ ، چیئرمین انٹر فیتھ ڈائیلاگ ہائیکورٹ بار شبنم شکیل ایڈووکیٹ، محمد خالد ایڈووکیٹ، عتیق الرحمن مغل ایڈووکیٹ ودیگر نے بھی خطاب کیا۔